نئے مالی سال کے بجٹ میں انتہائی امیر افراد اورکمپنیوں پر سُپر ٹیکس لگانے پر غور

نئے مالی سال کے بجٹ میں انتہائی امیر افراد اورکمپنیوں پر سُپر ٹیکس لگانے پر غور

اسلام آباد (آن لائن) حکومت نے نئے مالی سال کے بجٹ میں انتہائی امیر افراد اور کمپنیوں پر نیا ٹیکس سرچارج لگانے کا عندیہ دے دیا ہے۔ ذرائع کا کہنا ہے کہ آئیڈیا یہ ہے کہ نئے مالی سال کے بجٹ 2015-16 میں معاشرے کی ایلیٹ کلاس کی آمدن پر سپرٹیکس سرچارج عائد کر دیا جائے تاہم اس کی ابھی تک کوئی شرح طے نہیں ہوئی۔ بھارت کی طرز پر 10فیصد کی شرح کا نفاذ کرنے کی تجویز ہے۔ سپرکلاس ٹیکس کا تصور بھارت سے لیا گیا ہے جہاں اس ٹیکس کو گزشتہ سال کے بجٹ میں لگایا گیا ۔ ذرائع کے حوالے سے کہا گیا ہے کہ سپرٹیکس کے پیچھے منطق یہ ہے کہ امیر اور دولت مند افراد کو زیادہ ٹیکسز دینے چاہئیں ۔ بھارت میں ان افراد اور کمپنیوں پر سرچارج 12 فیصد تک بڑھا دیا گیا تھا جو بالترتیب ایک کروڑ اور 10کروڑ روپے سے زائد سالانہ کما رہے تھے ۔
سپر ٹیکس/غور