پاکستان اور افغانستان میں پولیو کے سرحد پار پھیلائو کو روکنے کیلئے معاہدہ طے

 پاکستان اور افغانستان میں پولیو کے سرحد پار پھیلائو کو روکنے کیلئے معاہدہ طے

اسلام آباد ( آئی این پی ) پاکستان اور افغانستان میں پولیو کے سرحد پار پھیلائو کو روکنے کے لیے معاہدہ طے پا گیا۔ گزشتہ روزیہاں اعلیٰ سطحی اجلاس منعقد ہواجس میںپاکستانی وفد کی قیادت وزیراعظم کی فوکل پرسن برائے پولیو سینیٹر عائشہ رضا فاروق جبکہ افغان وفد کی قیادت سینئر مشیر برائے صحت ڈاکٹر ہدایت اللہ ستانکزئی نے کی۔ اس موقع پر پاکستان اور افغانستان کے درمیان پولیو کے تدارک اور اس کے سرحد پار پھیلائو کو روکنے کے لیے حکمت عملی پر اتفاق کیا گیا ۔ اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے عائشہ رضا فاروق نے کہا کہ جنوبی ایشیاء میں پاکستان اور افغانستان پولیو سے مشترکہ طور پر متاثر ہیں اور اس خطے کو پولیو سے پاک کرنے کے لیے مل کر کوششیں کرنا ہوں گی۔ انہوں نے کہا کہ عالمی برادری کی نظریں ان دو نوں ممالک کی جانب لگی ہیں اور جب تک دونوں ممالک پولیو کا خاتمہ نہیں کر لیتے دنیا کو اس موذی مرض سے پاک نہیں کیا جا سکتا انہوں نے اس بات پر بھی زور دیا کہ پاکستان اور افغانستان سرحد کے ملحقہ علاقوں میں ویکسینیشن کے کام کو بہتر بنانے کی ضرورت ہے اور سرحدوں پر قائم پولیو ویکسینیشن پوائنٹ کی کارکردگی کو اس ضمن میں بہتربنایا جا رہا ہے۔ انہوں نے مزید کہا کہ ڈبلیو ایچ او کی انٹرنیشنل ہیلتھ ریگولیشن کمیٹی نے پولیو کے حوالے سے پاکستان اور افغانستان کو ایک اکائی قرار دیا ہے۔ لہذا ان دونوں ممالک میں جہاں بھی پولیو ہو گا پورے خطے کو خطرہ لاحق رہے گا۔ اس موقع پر افغانستان کے مشیر صحت نے پولیو کو سرحد پار پھیلائو کو روکنے کے لیے پاکستان کی کوششوں کو سراہا ۔ اجلاس میں دونوں ممالک کے وفود نے ایک مشترکہ پلان تیار کیا جس کی دونوں جانب سے منظوری دی گئی۔