آزادی کشمیریوں کا حق ہے جو کوئی نہیں چھین سکتا: پروفیسر بھیم سنگھ

اسلام آباد (ثناء نیوز) آزاد جموں و کشمیر کے سینئر وزیر چوہدری محمد یٰسین کی طرف سے جموں و کشمیر پینتھرز پارٹی کے سربراہ، تحریک آزادی کشمیر کے رہنما ممتاز قانون دان پروفیسر بھیم سنگھ کے اعزاز میں ظہرانہ دیا گیا۔ سردار خالد ابراہیم، راجہ فیصل ممتاز راٹھور، پیر عتیق الرحمان فیض پوری، سردار صغیر چغتائی، چوہدری الیاس، چوہدری محبوب الٰہی، چوہدری ایوب سمیت آزاد کشمیرکی ممتاز سیاسی و سماجی شخصیات کی شرکت۔ ظہرانے کے شرکاء نے پروفیسر بھیم سنگھ سے مسئلہ کشمیر، مقبوضہ جموں و کشمیر میں انسانی حقوق کی کھلی خلاف ورزیوں سمیت اہم امور پر تفصیلی بات چیت کی اور پروفیسر بھیم سنگھ کی انسانی حقوق کیلئے جدوجہد اور مسئلہ کشمیر کے لئے کام کرنے پر انہیں خراج تحسین پیش کیا۔ پروفیسر بھیم سنگھ نے کہا کہ بنیادی انسانی حقوق کا تقاضا ہے کہ قومی آزادی کے معاملے پر کبھی کمپرومائز نہیں ہوتا، کشمیری عوام کو اپنے مستقبل کا فیصلہ کرنے کا اختیار حاصل ہے اور یہ حق ہم سے کوئی نہیں چھین سکتا۔ اس موقع پر چودھری یٰسین نے کہا کہ بھارتی فوج کی چیرہ  دستیوں کو بے نقاب کرنے میں پروفیسر بھیم سنگھ کا اہم کردار ہے۔ دریں اثناء ایک انٹرویو میں جموں و کشمیر پینتھرز پارٹی کے سربراہ پروفیسر بھیم  سنگھ نے کہا کہ پاکستان اور بھارت مسئلہ کشمیر کے فریق ہیں تاہم اصل فریق کشمیری ہیں، ایٹم بم سے کوئی ملک حملہ نہیں کر سکتا، نیوکلیئر جنگ سے انسان ختم ہو جائیں گے، مسئلہ کشمیر پر پاکستان میں ملٹری اسٹیبلشمنٹ کا کنٹرول ہے۔ ایک سوال کے جواب میں پروفیسر بھیم  سنگھ  نے کہا کہ مشرف کا جو سات نکاتی فارمولہ تھا اس کی سمجھ میرے جیسے پروفیسر کو نہیں آسکی تو عام لوگوں کو کیا آئے گی۔انہوں نے کہا کہ مسئلہ کشمیر صرف اس صورت میں حل ہوگا کہ جموں وکشمیر کی عوام کو آپس میں مل بیٹھنے کا موقع دیا جائے۔