کشمیریوں نے پھر پاکستانی پرچم لہرا دیئے‘ بھارت عوامی حقوق کا احترام کرے : او آئی سی

کشمیریوں نے پھر پاکستانی پرچم لہرا دیئے‘ بھارت عوامی حقوق کا احترام کرے : او آئی سی

سری نگر(نوائے وقت رپورٹ+آن لائن+اے این این) مقبوضہ کشمیر میں بھارتی ظلم و تشدد کے باوجود پاکستان سے محبت اور یگانگت کے اظہار کا سلسلہ جاری ہے۔ مقبوضہ کشمیر کے دارالحکومت سری نگر میں ایک بار پھر پاکستانی پرچم لہرا دیا گیا۔ پاکستانی پرچم اننت ناگ میں شبیر احمد شاہ کی ریلی میں لہرایا گیا۔ پاکستانی پرچم مقبوضہ کشمیر میں اب تک چھ مختلف ریلیوں میں لہرایا جاچکا ہے۔ اسلامی ممالک کی عالمی تنظیم او آئی سی نے بھارتی حکومت پر زور دیا ہے کہ کشمیریوں کی مرضی اور حقوق کا احترام کرے۔ او آئی سی وزرائے خارجہ اجلاس کی سائیڈ لائن تنظیم کا کشمیر سے متعلق خصوصی رابطہ گروپ کا اجلاس منعقد ہوا جس کی صدارت جموں کشمیر کے بارے میں او آئی سی سیکرٹری جنرل کے خصوصی ایلچی عبدالرحمان عبداللہ عالم نے کی۔ اجلاس میں پاکستان کی نمائندگی وزیراعظم کے مشیر برائے امور خارجہ سرتاج عزیز نے کی جبکہ آذربائیجان کے سفیر المار ممدیارو‘ سعودی عرب کے سفیر محمد احمد طیب‘ ترقی کے سفیر اور نائجیریا کے سفیر کے علاوہ پاکستانی زیر انتظام کشمیر کے صدر سردار محمد یعقوب خان اور حریت رہنما علام محمد صفی نے بھی اجلاس میں شرکت کی۔ عبدالرحمان عبداللہ عالم نے کہا کہ میں کشمیر کاز کیلئے او آئی سی کی غیر متزلزل حمایت کا اعادہ کیا۔ انہوں نے کہا کہ مسئلہ کشمیریوں کی خواہشات کے مطابق حل کیا جائے‘ غیر متزلزل حمات جاری رکھیں گے۔کل جماعتی حریت کانفرنس نے او آئی سی کے سیکرٹری جنرل ایاد امین مدنی کی طرف سے مذاکرات کے ذریعے مسئلہ کشمیر کے حل کی حمایت کرنے پر ان کا شکریہ ادا کیا ۔ دریں اثنا کل جماعتی حریت کانفرنس (گ) نے ایک بار پھر واضح کیا کہ کشمیری پنڈتوں کی آڑ میں کشمیر کو فلسطین بنانے کی ایک گھناﺅنی سازش ہے۔ دریں اثناءکل جماعتی حریت کانفرنس(ع)کے ترجمان نے تریپورہ میں کالا قانون افسپاکو ہٹانے کے اقدام کو ا جرات مندانہ اقدام قرار دیا۔ ڈیموکریٹک فریڈم پارٹی سربراہ شبیر احمد شاہ نے کہا کہ ہم اقوام متحدہ کی قراردادوں کے تحت طے شدہ لائحہ عمل کے مطابق یاسہ فریقی بات چیت کے ذریعہ مسئلہ کشمیر کے نتیجہ خیز حل کے لئے کوشاں ہیں۔ دوسری جانب انسانی حقوق کی بین الاقوامی تنظیم ایمنسٹی انٹر نیشنل نے کہا ہے کہ پیلٹ گن کا استعمال طاقت کے استعمال سے متعلق بین الاقومی طریقہ کار کے منافی اوربنیادی طور پرغلط اور بے ربط ہے‘ استعمال پر پابندی لگائی جائے۔
کشمیر