سابقہ بھارتی فوجی افسروں کی تنظیم کا یوم جمہوریہ تقریب کے بائیکاٹ کا اعلان

نئی دہلی (نیوز ڈیسک) مطالبات پورے نہ ہونے پر سابقہ بھارتی فوجی افسروں کی تنظیم مودی حکومت پر برس پڑی اور احتجاجاً اگلے سال جنوری میں یوم جمہوری میں شرکت اور تمام سرکاری تقریبات کے بائیکاٹ کا اعلان کردیا، بھارتی میڈیا کے مطابق انڈین ایکس سروس مینز موومنٹ ایئر فورس، آرمی اور بحریہ سے ریٹائرڈ ہونے والے افسروں کیلئے مراعات اور پنشنوں میں اضافے کیلئے کئی برسوں سے مہم چلا رہی ہے ۔کے جنرل سیکرٹری گروپ کیپٹن (ر) وی کے گاندھی نے بتایا کہ ہم نے اپنے تمام ممبران سے کہا ہے کہ چونکہ حکومت ہمارے مطالبات نہیں مان رہی ہمیں ملک وقو م کی خدمات کے عوض وعدوں پر ٹرخایا جا رہا ہے لہٰذا سابقہ فوجی افسر کسی سرکاری تقریب میں شرکت نہیں کریں گے اور یوم جمہوریہ کی تقریب میں شرکت کرنے سے ہم اپنے ایوارڈ اور میڈل یافتہ افسروں کو روک دیں گے، ہم یوم جمہوریہ پر مارچ پاسٹ میں حصہ نہیں لیں گے، انہوں نے کہا کہ ایک عام سرکاری افسر 60 سال کی عمر میں ریٹائر ہو تو اسے خطیر پنشن گریجویٹی وغیرہ ملتی ہے وہ اپنے ذمہ گھر کے اکثر فرائض ادا کر چکا ہوتا ہے مگر ایک فوجی جو 37سال عمر میں ریٹائرڈ کردیا جائے اس کے سامنے پہاڑ جیسی ذمہ داریاں کھڑی ہوتی ہیں ، بہت تھوڑی پنشن اور دیگر سہولتیں ملتی ہیں دریں اثناءتنظیم کے اہم رہنما اور جنگ 1971 لڑنے پر ”ویر چکر“ کا میڈل پانے والے ونگ کمانڈر ”ر“ ایس ڈی کارنک نے گزشتہ روز پونا میں اپنے اعزاز میں ہونے والی سرکاری تقریب کا بائیکاٹ کردیا تقریب کے مہمان خصوصی بھارتی وزیر دفاع منوہر پاریکر تھے جنہوں نے کارنک کو ان کی ملک کیلئے خدمات پر ایوارڈ دینا تھا مگر کارنک نے اس تقریب میں شرکت نہیں کی۔
بھارتی فوجی/ ناراض