مقبوضہ کشمیر : حریت کانفرنس کی تین مجاہدین کی شہادت کیخلاف کل ہڑتال کی کال‘ فورسز کا کریک ڈائون کئی گرفتار

مقبوضہ کشمیر : حریت کانفرنس کی تین مجاہدین کی شہادت کیخلاف کل ہڑتال کی کال‘ فورسز کا کریک ڈائون کئی گرفتار

سرینگر (کے پی آئی) کل جماعتی حریت کانفرنس نے شوپیاں کے مضافات میں 20 گھنٹوں کے عسکری معرکے میں جاں بحق ہونے والے تین مجاہدین کو خراج عقیدت پیش کرنے کیلئے کل 30 اپریل (بدھ) کو پوری ریاست میں ہمہ گیر ہڑتال کی کال دیدی ہے۔ چیئرمین کل جماعتی حریت کانفرنس سید علی گیلانی نے کہا کہ ان قربانیوں کا تقاضا ہے کہ ہم 30 اپریل اور 7 مئی کے ڈھونگ الیکشن کا بھی مکمل بائیکاٹ کریں اور حکمرانوں اور ان کے مقامی ایجنٹوں کو پیغام پہنچائیں کہ کشمیری قوم بھارتی فوجی قبضے کے خلاف سراپا احتجاج ہے اور جب تک  ایک بھی فوجی ہماری سرزمین پر ہے، ہماری جدوجہد ہر صورت جاری رہے گی۔علاوہ ازیں مقبوضہ کشمیر میں پولیس نے بڑے پیمانے پر احتجاجی مظاہروں کو روکنے کیلئے نوجوانوں کی گرفتاریوں کا سلسلہ تیز کردیا ٗ متعدد نوجوانوں کو حراست میں لے کر تھانوں میں بند کردیاگیا ٗ گرفتاریوںسے تنگ سینکڑوں لوگوں نے دوسرے علاقوں کیلئے نقل مکانی شروع کردی۔ دوسری جانب بھارتی حکام نے علی گیلانی کی رہائشگاہ اور صدر دفتر کو سب جیل قرار دینے کے بعد انکے ٹیلیفون اور موبائل فون کے استعمال پر پابندی عائد کردی ہے۔سری نگر کے تمام علاقوں میں نوجوانوں کو تھانوں پر طلب کیا جارہا ہے اور اگر یہ نوجوان حیل و حجت کریں تو انہیں گھروں سے اٹھا لیا جاتا ہے ۔ پویس ذرائع کا کہنا ہے کہ جنوبی کشمیر میں انتخابات کے روز پیش آنے والے حالات کی پیش نظر یہ فیصلہ لیا گیا ہے کہ دیگر دو انتخابی حلقوں میں پولنگ کو پر امن بنانے کیلئے شر پسند عناصر کا کریک ڈائون عمل میں لایا جائے اور ان کو پولنگ کے دن کے بعد رہا کر دیا جائے گا ۔ ادھر شوپیاں میں بارودی سرنگ کے دھماکے میں دو کمسن بچے شدید زخمی ہوگئے۔ اطلاعات کے مطابق عامر بشیر اور نازیہ اختر نامی دونوں بچے تصادم آرائی کی جگہ کے نزدیک کھیل رہے تھے کہ وہاں اچانک دھماکہ ہوا۔ دفتر میں قیدی بنائے گئے حریت رہنماوں اور آفس عملے کے باہر رابطہ کرنے پر سختی کے ساتھ  پابندی لگا دی۔ حریت ترجمان ایاز اکبر نے کہا کہ گیلانی کے ساتھ ملاقات کی غرض سے آئے رشتہ داروں سمیت کسی بھی شخص کو دفتر کے اندر جانے کی اجازت نہیں دی جارہی ہے۔