’’ یوم سیاہ‘‘ جدہ میں کشمیر کمیٹی کا اجلاس، قرارداد منظور، ریاستی تشدد کی مذمت

جدہ( نمائندہ خصوصی)کشمیرکے یوم سیاہ کے موقع پر کشمیر کمیٹی جدہ کا اجلاس قونصل جنرل آفتاب احمد کھوکھر کی رہائش پر ہوا۔ شرکاء نے کہا کہ کشمیریوںپر ریاستی جبر و تشدد کا سلسلہ 26اکتوبر 1947ئ؁ کو ہی شروع ہو گیاتھا جب ہندوستانی فوج ناجائز طور پر کشمیر پر قابض ہوئی تھی۔ اسی دن کو لائن آف کنٹرول کے آر پار اور دُنیا بھر میں کشمیر ی یوم سیاہ کے طور پر مناتے ہیں۔قونصل جنرل آفتاب کھوکر نے بتایا کہ اس حوالے سے ایک تقریب 6 نومبر کو OIC کے ہیڈ کوارٹر جدہ میں ایک تقریب منعقد کی جائے گی جس میں مختلف ملکوں کے سفارتکار شریک ہونگے  جبکہ مہمان خصوصی او آئی سی کے سیکرٹری جنرل ڈاکٹر ایاد مدنی ہوں گے۔ کشمیری رہنما غلام محمد صفی بھی شریک ہونگے۔ ایک دوسری تقریب7 نومبر کو قونصل جنرل کی رہائش پر منعقد کی جائے گی جس میں پاکستانی ، کشمیری اور سعودی کمیونٹی کے افراد شریک ہوں گے۔ کشمیر کمیٹی جدہ نے اس موقع پر متفقہ طور پرایک قرارداد بھی پاس کی جس میں کشمیریوں پر مقبوضہ کشمیر میں ہونے ظلم و ستم پر گہری تشویش کا اظہار کیا اور ان کے ساتھ آزادی کی اس جدو جہد میں مکمل اظہار یکجہتی کا اظہار کیا۔قونصل جنرل  نے کہا کہ کشمیریوں کو حق خود اختیاری نہ ہونے کی وجہ سے ہر طرح کے حقوق سے محروم ہیں۔ کشمیر پر بھارتی غاصبانہ قبضہ اور ان پر ریاستی تشدد کی مذمت کی اور عالمی حقوق انسانی کی تنظیموں کو مقبوضہ کشمیر میں بلا روک ٹوک آنے جانے کی اجازت بھی دے۔ قرار داد میں سعودی عرب اور او آئی سی کی کشمیریوں کی آزادی کی جدوجہد کی مسلسل حمایت کا اعتراف کرتے ہوئے شکریہ ادا کیا اور او آئی سی سے درخواست کی کہ وہ جلد مقبوضہ کشمیر میں حقوق انسانی کی خلاف ورزیوں کو مانیٹر کرنے کے لئے کوئی مؤثر نظام وضع کرے۔ جنرل آفتاب کھوکھر، پریس قونصل سہیل علی خان، قونصلیٹ کے افسر ،کشمیرکمیٹی کے صدر مسعود احمد پوری، جنرل سیکرٹری منیر گوندل، چوہدری اعظم، کرسچین کمیونٹی کے صدر پرویز یوسف  اور زرین خان بھی موجود تھے۔