مقبوضہ کشمیر…بھارتی فوج نے کشمیری رہنمائوں کو دوبارہ گھروں میں نظر بند کر دیا

سرینگر (آن لائن/ ثناء نیوز) مقبوضہ کشمیر میں کل جماعتی حریت کانفرنس کی اپیل پر بھارتی فوج کے ہاتھوں سوپور اور مائسمہ چوک میں حریت رہنما یاسین ملک کے کزن کے قتل اور شہادتوں کے خلاف نماز جمعہ کی ادائیگی کے بعد ہزاروں افراد سڑکوں پر نکل آئے زبردست احتجاجی مظاہرے کئے اور مکمل ہڑتال کی گئی ‘ کاروبار زندگی مفلوج ہو کر رہ گیا۔ تعلیمی ادارے بند رہے۔ سرینگر سمیت دیگر علاقوں میں غیر اعلانیہ کرفیو نافذ کر دیا۔ میرواعظ عمر فاروق‘ آغا حسن الموسوی اور دیگر رہنمائوں کو دوبارہ گھروں میں نظر بند کر دیا گیا اور مساجد کا گھیرائو کیا گیا۔ فورسز اور مظاہرین کے درمیان جھڑپوں میں متعدد افراد زخمی ہوگئے۔ اے این این کے مطابق بارودی سرنگ دھماکے میں ایک اہلکار ہلاک ہوگیا جبکہ خاتون اور اس کے بیٹے سمیت 4 افراد پراسرار طور پر لاپتہ ہوگئے۔ ایک نجی ٹیلی ویژن سے گفتگو میں میر واعظ نے بتایا کہ لوگوں کو نماز جمعہ ادا نہیں کرنے دی گئی۔ انہوں نے مطالبہ کیا کہ سکیورٹی فورسز کے خصوصی اختیار ختم کئے جائیں۔اور عوام کے ساتھ ظلم روا رکھنے والوں کا احتساب کیا جائے۔ انہوں نے کہا کہ جب تک کشمیریوں کے مطالبات تسلیم نہیں کئے جاتے احتجاج جاری رہے گا۔