آرمینیا میں نسل کشی ، پوپ فرانسس کے بیان میں صلیبی ذہنیت کی جھلک ہے : ترکی

انقرہ ( اے ایف پی ) پہلی جنگ عظیم میں آمینیا میں ہونے والے قتل عام کو نسل قرار دینے پر ترکی نے مسیحی روحانی پیشوا پوپ فرانس کو شدید تنقید کا نشانہ بیا یا ہے ۔ ترک نائب وزیر اعظم نورمتین کا نیلکلی نے کہا یہ حقیقت کا شکار کرنے والا کوئی بیان نہیں تھا ۔ یہ بڑا افسوسناک بیان تھا جس میں صلیبی جنگواں والی ذہنیت دکھائی دیتی ہے ۔پوپ فرانسس نے جمعہ کے روز آرمینیا کے دارالحکومت پروان میں یہ بیان دیا تھا ۔ دوسری طرف ویٹیکن نے ترک کے الزام کو مسترد کرتے ہوئے کہا ہے پوپ فرانسس دیواریں نہیں مل تعمیر کرنا چاہتے ہیں ۔ انکا بیان سنا جائے تو اس میں ترکی کے لوگوں کیخلاف کوئی لفظ نہیں ہے ۔ واضح رہے پوپ فرانسس نے 1915 ء سے 1917 ء تک کے قتل عام کو پہلی مرتبہ 2015 میں نسل کشی قرار دیا تھا ۔ پوپ فرانس نے اتوار کے روز ترکی اور آرمینیا کی سرحد پر دو امن کی فاختائیں چھوڑیں ۔