گوانتاناموبے: 47 خطرناک افراد کو قید‘ 110 کو رہا کیا جائے: امریکی ٹاسک فورس

لندن (بی بی سی ڈاٹ کام) گوانتانامو بے کے امریکی قیدخانے کو بند کرنے کے سلسلے میں اقدامات پر غور کرنے والی ٹاسک فورس نے تجویز کیا ہے کہ قید خانے میں بند 47 قیدی ایسے ہیں جن کو بغیر مقدمہ چلائے غیر معینہ مدت کیلئے قید رکھا جائے۔ تجویز کے مطابق ان قیدیوں پر مقدمات چلائے نہیں جاسکتے کیونکہ اس سے بہت حساس معلومات کے منظر عام پر آنے کے خدشات ہیں اور یہ قیدی اتنے خطرناک ہیں کہ ان کو رہا بھی نہیں کیا جاسکتا۔ یہ پہلی مرتبہ ہے کہ امریکی حکام نے ایسے قیدیوں کی تعداد بتائی ہے جن کو بغیر کسی الزام لگائے قید رکھا جاسکتا ہے۔ دوسری طرف انسانی حقوق کے لیے کام کرنے والی تنظیم امریکن سول لبرٹیز یونین نے اس تجویز کو تنقید کا نشانہ بنایا ہے۔ ٹاسک فورس نے سفارش کی ہے کہ تقریباً 35 قیدیوں پر عدالتوں یا فوجی کمیشنوں میں مقدمات چلائے جائیں جبکہ 110 ایسے قیدی ہیں جن کو، ٹاسک فورس کے مطابق ابھی رہا کیا جاسکتا ہے یا مستقبل کی کسی تاریخ پر۔ یاد رہے کہ صدر باراک اوباما نے گوانتانامو بے کی جیل بند کرنے کی حتمی تاریخ کا اعلان کیا تھا جو کے رواں مہینے گزر گئی اور امریکی اہلکاروں نے اعتراف کیا ہے کہ وہ جیل کو بند کرنے کی کوئی اور حتمی تاریخ نہیں دے سکتے۔