بھارتی سیاسی جماعت سماج وادی پارٹی نے مقبوضہ کشمیر کو متنازع علاقہ تسلیم کرتے ہوئے مسئلہ پر بحث کا مطالبہ کیا ہے

بھارتی سیاسی جماعت سماج وادی پارٹی نے مقبوضہ کشمیر کو متنازع علاقہ تسلیم کرتے ہوئے مسئلہ پر بحث کا مطالبہ کیا ہے

ریاست اتر پردیش کے علاقے بدایوں میں جلسے سے خطاب میں پارٹی کے رہنما اعظم خان نے کہا کہ کشمیر کے بھارت کا حصہ ہونے پر بحث ہوسکتی ہے کیونکہ بھارت میں آہستہ آہستہ ہی سہی، پڑھے لکھے طبقے اور سیاسی جماعتوں کو کشمیر کی متنازع حیثیت کا احساس ہو رہا ہے۔ اعظم خان نے کہا کہ کانگریس کی کابینہ میں کشمیر کا صرف ایک ہی وزیر غلام نبی آزاد شامل ہے۔ جو کانگریس کی اقلیتوں کے بارے میں غیر سنجیدگی کو ظاہر کرتا ہے۔ دوسری جانب سماج وادی کے رہنما اعظم خان کے اس بیان پرکانگریس اور بھارتیہ جنتا پارٹی نے شدید ردعمل کا اظہارکیا ہے۔ کانگریس کے رہنما پرمود تیواری کا کہنا ہے کہ بھارتی کابینہ میں ایک نہیں بلکہ دو مسلمان وزرا ہیں۔ دوسرے فاروق عبداللہ ہیں جنہیں اعظم خان بھول گئے۔