اردن میں پھانسی پر پابندی اٹھالی گئی ، 11 مجرموں کو تختہ دار پر لٹکادیا گیا

عمان(آئی این پی ) پاکستان کے بعد اردن میں بھی پھانسی پر پابندی اٹھالی گئی ، قتل کرنے پر گرفتار 11 مجرموں کو پھانسی دیدی گئی ۔وزارت داخلہ نے بھی سزائے موت پر عملدر آمد کی تصدیق کر دی ۔ اردن میں بھی 8 سال سے غیر اعلانیہ طور پر سزائے موت پر پابندی عائد تھی۔اردن کے سرکاری خبر رساں ادارے نے وزارت داخلہ کے حوالے سے بتایا ہے کہ یہ 11 افراد پھانسی کی سزاء دی گئی، تمام افراد قتل کے مجرم تھے ان کو صبح سویرے سزائے موت دی گئی۔حکام کے مطابق جن افراد کی سزائے موت پر عمل درآمد کیا گیا ہے ان کو 2005 اور 2006 میں سزاء سنائی گئی تھی۔اردن میں آخری بار سزائے موت پر 2006 میں عملدر آمد کیا گیا تھا۔2006 سے رواں برس تک 122 افراد کو سزائے موت سنائی جا چکی ہے۔وزیر داخلہ محمد حسین مجالی نے اپنے حالیہ ایک بیان میں کہا تھا کہ اردن میں سزائے موت کے حوالے سے مختلف آراء موجود ہے اور جرائم کی شراح میں اضافہ سزائے موت پر عملدرآمد نہ ہونے کو قرار دیا جاتا ہے۔