ممکنہ جارحیت ناکام بنانے کیلئے شمالی کوریا پر ایٹمی حملے میں پہل کر سکتے ہیں : جنوبی کوریا

سی¶ل (مانیٹرنگ نیوز) جنوبی کوریا کے وزیر دفاع نے کہا ہے کہ جنوبی کوریا حفظِ ماتقدم کے طور پر شمالی کوریا کے ایٹمی حملوں سے بچنے کے لئے شمالی کوریا پر ایٹمی حملے میں پہل کر سکتا ہے ۔ دوسرف طرف شمالی کوریا کو چھ ملکی مذاکرات پر لانے کے لئے بین الاقوامی کوششوں کا کوئی نتیجہ ابھی تک نہیں نکل سکا۔ 2009ءکے اپریل کے مہینے میں شمالی کوریا نے مذاکرات کا راستہ بند کر کے دوسرا ایٹمی تجربہ کیا تھا۔دوسری طرف شمالی کوریا کی وزارت خارجہ نے واضح کہا ہے کہ امریکہ، چین، جنوبی کوریا، روس اور جاپان سے اس وقت تک مذاکرات نہیں ہوں گے جب تک اقوامِ متحدہ شمالی کوریا پر پابندیان نہیں اٹھا لیتا۔ شمالی کوریا کے اس مطالبے کو جنوبی کورین اور امریکن حکومت نے مسترد کرتے ہوئے کہا ہے کہ پہلے شمالی کوریا ایٹمی ہتھیاروں کے خاتمے کے حوالے سے اقدامات کرے۔
واضح رہے کہ شمالی کوریا نے پہلا ایٹمی تجربہ 2006ءمیں کیا تھا۔ امریکی نائب وزیر خارجہ کرٹ کیمپ میل آئندہ ماہ کے شروع میں جاپان اور جنوبی کوریا کا دورہ کرینگے جس کے دوران علاقائی سلامتی کے مسئلے سمیت چھ رکنی مذاکرات کی بحالی پر بات چیت کی جائے گی۔