سی آئی اے پاکستان میں ڈرون کا اختیار چھوڑنے کو تیار نہیں: امریکی میڈیا

سی آئی اے پاکستان میں ڈرون کا اختیار چھوڑنے کو تیار نہیں: امریکی میڈیا

واشنگٹن (اے این این + بی بی سی ڈاٹ)  امریکی میڈیا نے دعویٰ کیا ہے کہ وائٹ ہائوس  کی جانب سے رواں سال  کے آغاز میں  ڈرون  آپریشن  کا اختیار سی آئی اے سے لیکر وزارت  دفاع کو منتقل  کرنے کا عندیہ  دیا تھا مگر پاکستان  کی حد تک  سی آئی اے  ڈرون  کارروائیوں  کا اختیار  وزارت  دفاع کو دینے کیلئے تیار نہیں۔  لاس اینجلس  ٹائمز  کی رپورٹ  میں کہا گیا صدر اوباما  کی طرف سے ڈرون حملوں کے بارے میں حکمت عملی تبدیل کرنے کے چھ ماہ  بعد حملوں  کی تعداد  میں واضح کمی ہوئی ہے جس کی بڑی وجہ  اہداف  کی نشاندہی  میں سخت  قواعد و ضوابط   کا اطلاق ہے۔ امریکی جریدے ’’لانگ وار جرنل‘‘ کے مطابق رواں سال  یمن میں 22 ڈرون حملے ہوئے جبکہ گزشتہ سال تعداد 42 تھی۔ جریدے کے مطابق  اس برس پاکستان میں ڈرون حملوں سے 11 اور یمن میں 2 شہری جاں بحق ہوئے۔ ماہرین  کا کہنا ہے کہ پاکستان میں ڈرون حملے  سے حکیم اللہ محسود  کی موت سے  ثابت ہوتا ہے کہ ڈرون  اب تک دہشت گردی  کیخلاف سب سے  کارگر  ہتھیار ہے۔  انسداد دہشت گردی  کے آپریشنز  سے وابستہ  سرکاری  اہلکاروں کا خیال ہے کہ وزارت دفاع  اس سرعت  سے  ڈرون حملے  نہیں کرسکے گی  جس طرح  سی آئی  اے کرتی رہی ہے۔