ماحولیاتی کانفرنس : ڈیڈ لاک برقرار ‘ عالمی حدت میں کمی کیلئے نیا ڈرافت تیار

کوپن ہیگن (مانیٹرنگ ڈیسک + این این آئی + آن لائن) اقوام متحدہ کے تحت عالمی ماحولیات کے تحفظ اور حدت میں کمی کی سربراہی کانفرنس میں ڈیڈلاک پیدا ہوگیا۔ تاہم اقوام متحدہ نے اس ڈیڈلاک کو توڑنے کےلئے ماحولیات اور حدت میں کمی کےلئے نیا ڈرافٹ تیار کیا ہے۔ اقوام متحدہ نے عالمی رہنماﺅں سے اپیل کی ہے کہ وہ ایک دن مزید اس ڈرافٹ پر غور کر لیں۔ نئے ڈرافٹ میں ترقی یافتہ ممالک کی صنعتوں کے سبب فضاءمیں شامل ہونے والی کاربن میں بڑے پیمانے پر کمی کی تجویز دی گئی ہے۔ ڈرافٹ میں کہا گیا ہے کہ ترقی یافتہ ممالک کو 2050ءتک 50 فیصد کاربن کم کرنی چاہئے۔ ماحول کو خراب کرنے والی زہریلی گیسوں کے اخراج میں 1990ءکی سطح سے بھی نیچے 50 فیصد کمی کرنی چاہئے۔ عالمی حدت میں اضافے کو 2 ڈگری کم کیا جانا چاہئے۔ دریں اثناءامریکی صدر اوباما نے ماحولیات پر مزید بات کرنے کےلئے چین کے وزیراعظم وین جیا باﺅ کو دعوت دی ہے۔ بارک اوبامہ نے کہا کہ گرین ہاﺅس گیسز کی کٹوتی کیلئے تیار ہیں تاہم تمام ممالک کو اقدامات کرنے کیلئے عزم کا اظہار کرنا چاہئے کہ ہم صرف باتیں کرنے کی بجائے عملی طور پر کام کریں۔ چینی وزیراعظم نے کہا کہ کاربن کی شدت 40سے 45 فیصد کم کرنے کیلئے ہمیں انتھک کوششوں کی ضرورت ہوگی۔چینی وزیراعظم نے کہا کہ ہم عملی اقدامات کر کے اپنے وعدے کا پاس کرینگے۔ د۔ گرین پیس کی طرف سے مظاہرہ کیا گیا۔ مظاہرین جنہوں نے بینرز اور پلے کارڈز اٹھا رکھے تھے۔ سڑکوں پر مارچ کیا۔ ان بینرز اور پلے کارڈز پر موسمیاتی تبدیلیوں کے نقصان سے بچاﺅ کیلئے اقدامات کرنے کے حق میں نعرے درج تھے۔