عراق : جنگجوئوں کا لت عفر پر قبضہ جھڑپیں پچاس ہلاک‘ فضائی حملوں کا آپیشن زیرغور ہے : کیری

عراق : جنگجوئوں کا لت عفر پر قبضہ جھڑپیں پچاس ہلاک‘ فضائی حملوں کا آپیشن زیرغور ہے : کیری

 بغداد+ ریاض+نیویارک (بی بی سی+ ثناء نیوز+ نوائے وقت رپورٹ+ ایجنسیاں) سْنی شدت پسند تنظیم دولتِ اسلامیہ عراق و شام کے جنگجوؤں نے شمالی عراقی شہر تل عفر پر قبصہ کر لیا ہے۔ادھر ایک امریکی اہلکار نے بی بی سی سے بات کرتے ہوئے بتایا ہے کہ امریکہ عراق میں سلامتی کے معاملے پر ایران سے براہ راست بات چیت کے بارے میں غور کر رہا ہے۔سعودی عرب نے کہا ہے کہ عراق میں غیر ملکی مداخلت قبول نہیں۔ بغداد کے بین الاقوامی ہوائے اڈے کے شمالی علاقے میں داعش اورسرکاری فورسزکے درمیان شدید جھڑپیں چھڑگئیں۔ ادھر جان کیری نے یاہو نیوز کو انٹرویو میں کہا عراقی حکومت کی مدد کیلئے ہم فضائی حملوں کے آپشن پر غور کر رہے ہیں۔عراق میں حالیہ شورش کی وجہ حکومتی پالیسیاں ہیں۔ این این آئی کے مطابق عراق کی وفاقی عدالت نے سپیکر اسامہ نجیفی کو پارلیمنٹ کی رکنیت اور سپیکر  شپ سے معزول کردیا۔ ایران کا کہنا ہے کہ سکیورٹی تعاون کیلے تیار ہیں لیکن خلیج میں امریکی بحری بیڑے کی موجودگی قبول نہیں۔ ایران نے خلیج فارس میں امریکی مداخلت پر تشویش کا اظہار کیا۔ ایرانی وزارت خارجہ کی ترجمان مرضیہ افخام نے کہا کہ عراق دہشتگردی اور انتہا پسندی سے نمٹنے کی صلاحیت رکھتاہے تاہم امریکی مداخلت عراق کے بحران کومزید پیچیدہ بنادے گی۔ برطانوی نشریاتی ادارے کے مطابق اگر یہ 1700 فوجیوں کے قتل کی تصاویر اصلی ہیں تو یہ 2003 میں عراق پر امریکی قبضے کے بعد سے سب سے سفاکانہ قتلِ عام ہو گا۔ اقوام متحدہ کے سیکرٹری جنرل بان کی مون نے عراقی قیادت پر زور دیا ہے کہ وہ فرقہ وارایت نہ پھیلنے دیں۔این این آئی کے مطابق  بم دھماکوں اوربمباری کے نتیجے میں 50افرادمارے گئے ،جھڑپوں کے دوران ایئرپورٹ کی مرکزی عمارت کو ھاون راکٹوں سے حملے کا نشانہ بنایا گیا۔ پروازیں منسوخ کر دی گئیں،ادھر الانبار سے تعلق رکھنے والے قبائل کے رہنما علی الحاتم نے بتایاہے کہ اگر نوری المالکی اپنی فوج نکال لیں تو وہ الانبار گورنری کو داعش سے پاک کرا لیں گے۔قبل ازیںامریکا نے بغداد میں اپنے سفارتخانے کی سیکیورٹی بڑھانے کے ساتھ وہاں موجود اپنے عملے کی تعداد کمی کا سلسلہ شروع کر دیا ہے۔ امریکہ سمیت مغربی ممالک نے سفارتی عملہ نکالنا شروع کر دیا۔ ان لائن کے مطابق امریکی رکن جیل کرنل کینتھ کنگ نے انکشاف کیا داعش کے سربراہ ابوبکر البغدادی نے 2009ء میں رہائی کے بعد دھمکی دی تھی کہ وہ امریکی حکام کو نیویارک میں دیکھ لے گا۔ ادھر عراق کی کشیدہ صورتحال کے سبب تیل کی عالمی سطح پر قیمتیں بڑھ گئیں۔