سری لنکا : بودھ انتہا پسندوں کے حملے،3 مسلمان شہید، کئی مکان اور دکانیں تباہ، مساجد کو نقصان

کولمبو + الوتھگما (اے ایف پی + آن لائن)  سری لنکا  میں  بودھ مت  کے  انتہا پسند پیروکاروں نے مسلم کش  فسادات کے دوران 3 مسلمانوں کو شہید اور 78 سے زائد کو شدید زخمی کر دیا۔  وفاقی دارالحکومت سے 60 کلو میٹر دور جنوب میں واقع شہر الوتھگما میں انتہا پسند بودھ متوں  کے ہجوم  نے مسلمانوں کے کئی گھر،  دکانیں اور تجارتی مراکز کو جلا کر تباہ کر دیا اور مساجد کو  نقصان پہنچایا جبکہ بوریوالہ  نا می گائوں میں بھی حملے کئے گئے۔ جہاں پولیس کے کرفیو  اور آنسو گیس  کی شیلنگ کے  باوجود  سری لنکن حکام مسلمانوں کو بچانے  میں ناکام رہے۔  کابینہ میں مسلمانوں کے نمائندے و وزیر انصاف  رئوف  حکیم  نے انتہا پسند بدھ مت  کے پیروکاروں کے ظلم و بربریت کا شکار ہونیوالے  علاقہ کا دورہ کرتے ہوئے کہا ہے کہ ان پر کابینہ  سے استعفیٰ کیلئے دبائو ہے کیونکہ پولیس مسلمانوں کو تحفظ فراہم کرنے میں ناکام ہو  چکی۔  مقامی مسلمانوں کا کہنا ہے کہ پولیس ہمیں حملہ آوروں سے تحفظ نہیں دے سکی۔ حملہ آوروں نے مساجد کو بھی نقصان پہنچایا۔  ادھر آن لائن  کے مطابق سری لنکن  حکام نے 2 جنوبی  شہروں میں آلنگاما اور بوریوالا میں کرفیو نافذ کر دیا ہے۔  عینی شاہدین  کے مطابق ’’بوڈو بالاسینا‘‘   بودھ مت  کے پیروکاروں  کی تنظیم کے کارکنوں  نے مسلمانوں کو بسوں سے اتار کر بہیمانہ تشدد کا نشانہ بنایا اور لوٹ مار کی۔ مسلمانوں  نے صدر سے تحفظ   فراہم کرنے کی اپیل کی ہے۔ دوسری طرف  مہندرا راجا  پکسے  نے واقعات کی تحقیقات کا حکم دیدیا ہے۔