”اسرائیلی ریاست کا خواب چکنا چور ہو گیا“ دیگر ملکوں سے اسرائیل آنے والے یہودی مایوس

مقبوضہ بیت المقدس (ثناءنیوز) اسرائیل میں رہنے والے ایک تہائی سے زیادہ یہودیوں کی رائے ہے کہ اسرائیلی خواب چکناچور ہوچکے ہیں۔ حالیہ غزہ جنگ میں فلسطینی مزاحمت کاروں کی جانب سے پہلی مرتبہ تل ابیب اور القدس پر راکٹ حملوں کے بعد ان یہودیوں نے اسرائیل سے ہجرت معکوس کی خواہش ظاہر کی ہے۔ کثیر الاشاعت عبرانی اخبار ”ہارٹز“ کے زیراہتمام ہونےوالے رائے عامہ کے عوامی جائزے میں 37 فیصد اسرائیلوں نے خواہش ظاہر کی ہے کہ وہ ملک میں حالیہ بدترین اقتصادی بحران کی وجہ سے جلد از جلد ہجرت معکوس میں دلچسپی رکھتے ہیں۔ 30 سے 49 برس کی عمر کے ان افراد کا کہنا تھا کہ اسرائیلی ریاست کا خواب چکناچور ہوچکا ہے۔ مزاحمت کاروں کے میزائلوں کی تل ابیب اور القدس تک مار، ایران کے ساتھ جنگ کے امکانات اور غزہ پر دوبارہ حملوں کی اسرائیلی دھمکیوں کے تناظر میں بھی صہیونی ریاست میں سکونت مفید نہیں ہے۔