بھارتی عدالت نے بابری مسجد سانحہ کی 23 اہم فائلیں گم ہونے کی تحقیقات کا حکم دیدیا

لکھنئو (اے پی پی) بھارتی عدالت نے تفتیشی ادارے سی بی آئی کو بابری مسجد سانحہ کے بارے میں 23 اہم فائلیں گم ہونے کی تحقیقات کا حکم دیدیا۔ الہ آباد ہائی کورٹ نے یہ احکامات مقدمہ کی سماعت کے موقع پر دیئے جس میں عدالت کی توجہ اترپردیش کی وزارت داخلہ سے 23 فائلوں کی گمشدگی کی جانب مرکوز کرائی گئی تھی۔
عدالت کے تین رکنی بینچ نے سی بی آئی کو اپنی عبوری رپورٹ 25 اگست جبکہ مکمل رپورٹ 2 ماہ کے عرصہ میں عدالت میں پیش کرنے کے احکامات جاری کئے۔ یاد رہے کہ اترپردیش حکومت محکمہ داخلہ سے بابری مسجد کی شہادت سے متعلق 23 فائلوں کی گمشدگی کی باضابطہ ایف آئی آر درج کرا چکی ہے۔ بابری مسجد ایکشن کمیٹی نے عدالت کو بتایا کہ بابری مسجد سانحہ کے متعلق اہم دستاویزات کو پراسرار طور پر چرا لیا گیا ہے جو باعث تشویش ہے جس پر عدالت نے ریاستی چیف سیکرٹری کو عدالت میں طلب کر لیا۔ یاد رہے کہ 16ویں صدی کی تاریخی بابری مسجد کو 6 دسمبر 1992ء کو ایودھیہ میں ہندو انتہاپسندوں نے شہید کیا تھا۔