عالمی بنک داسو ڈیم کیلئے 70 کروڑ ڈالر دینے پر آمادہ، امریکی امداد 40 فیصد تک بڑھ سکتی ہے: اسحاق ڈار

واشنگٹن (نوائے وقت رپورٹ + ایجنسیاں) وفاقی وزیر خزانہ اسحاق ڈار نے کہا ہے کہ عالمی بنک داسو ڈیم کیلئے 70 کروڑ ڈالر دینے پر آمادہ ہوگیا ہے۔ امریکی سرمایہ کار کارپوریشن ڈیڑھ ارب ڈالر کی سرمایہ کاری کریگی۔ پاکستان کیلئے امریکی امداد 40 فیصد تک بڑھنے کا امکان ہے۔ نوازشریف 23 اکتوبر کو اوباما سے تجارت اور سرمایہ کاری بڑھانے پر بات چیت کریں گے اور اپنے دورہ امریکہ کے دوران دونوں ملکوں کے درمیان سرمایہ کاری اور تجارت کے شعبوں میں تعاون کو وسعت دینے پر توجہ مرکوز رکھیں گے۔ یہ بات وزیر خزانہ سینٹر اسحاق ڈار نے اپنے دورہ امریکہ کے اختتام پر واشنگٹن میں صحافیوں سے بات چیت میں کہی۔ وزیراعظم امریکہ کے بزنس لیڈرز سے بھی ملاقاتیں کریں گے۔ دوطرفہ تعلقات پر امریکی حکام سے ان کی ملاقاتیں مثبت رہیں۔ امریکی حکام نے انہیں کولیشن سپورٹ فنڈ کے بقایا 32 کروڑ 20 لاکھ ڈالر جلد جاری کرنے کی یقین دہانی کرائی ہے۔ یو ایس ایڈ اور تجارتی شعبہ کے متعلق سینئر حکام سمیت تمام امریکی حکام کے ساتھ ان کی ملاقاتیں مفید رہی ہیں۔ بجٹ اخراجات کیلئے پاکستان کیلئے امریکی امداد موجودہ 20 فیصد سے بڑھ کر 35 تا 40 فیصد ہونے کا امکان ہے۔ امریکہ کے انڈر سیکرٹری آف ٹریژری ڈیوڈ کوہن سے ملاقات میں انہوں نے منی لانڈرنگ کے انسداد کیلئے کوششوں پر تبادلہ خیال کیا۔ پاکستان نے اس حوالہ سے اپنے قوانین کو بین الاقوامی قوانین سے ہم آہنگ کرنے کیلئے آرڈریننس کے ذریعہ ترمیم بھی متعارف کرائی ہے۔ عالمی بنک نے داسو ہائیڈرو پاور پراجیکٹ کیلئے 70 کروڑ ڈالر دینے کا وعدہ کیا ہے اور انٹرنیشنل ڈویلپمنٹ اسسنٹس کے لئے ایک ارب ڈالر پر اتفاق کیا ہے۔ این این آئی کے مطابق وزیر خزانہ اسحاق ڈار اور سٹیٹ بنک آف پاکستان کے گورنر یاسین انور نے اتوار کے روز آئی ایم ایف کی منیجنگ ڈائریکٹر مسز لاگراڈ نے نجی ملاقات کی جو پاکستان کی اہمیت کا اعتراف ہے۔ اسحاق ڈار نے پاکستان کیلئے ای ایف ایف پروگرام کی منظوری کے سلسلے میں ایم ڈی اور ان کی ٹیم کے تعاون کا شکریہ ادا کرتے ہوئے حکومت کی جانب سے کی جانیوالی اہم جرا¿تمندانہ اور مضبوط سیاحتی اصلاحات سے آگاہ کیا جن سے ملک پائےدار معاشی استحکام کی راہ پر گامزن ہوسکتا ہے۔