لیبیا سے اٹلی جانے کے خواہشمند: افریقی تارکین وطن کی کشتی بحیرہ روم میں غرق، 400 ہلاک

لیبیا سے اٹلی جانے کے خواہشمند: افریقی تارکین وطن کی کشتی بحیرہ روم میں غرق، 400 ہلاک

طرابلس روم (رائٹرز+ نوائے وقت رپورٹ+نیٹ نیوز) لیبیا سے اٹلی پہنچنے کی کوشش میں اوورلوڈ کشتی بحیرہ روم میں ڈوب گئی، نوجوانوں اور کان کنوں سمیت 400 تارکین وطن ڈوب کر ہلاک ہو گئے، 150 مسافروں کو بچا لیا گیا، کشتی پر 550 افراد سوار تھے، سیو دی چلڈرن اور دیگر تنظیموں کی رپورٹ کے مطابق زندہ بچنے والوں کو اٹلی پہنچا دیا گیا، مرنیوالوں کی اکثریت کا تعلق افریقہ سے تھا، مزید تفصیلات نہیں دی گئیں۔غیر ملکی خبررساں ادازرے کی رپورٹ کے مطابق لیبیا کے ساحل سے منزل کی جانب بڑھنے کے تقریباً 24 گھنٹے بعد ڈوب گئی، حادثے میں تقریباً 150 بچ جانے والے افراد کے مطابق منگل کی صبح انہیں ریسکیو کر کے اٹلی کی جنوبی بندرگاہ لایا گیا ہے اس واقعے سے قبل بحیرہ روم میں رواں سال 500افریقی تارکین وطن ہلاک ہو چکے ہیں جو گزشتہ سال اسی عرصے کے مقابلے میں 47ہلاکتیں زیادہ ہے، سیو دی چلڈرن نامی تنظیم کے ترجمان نے رائٹرز کو بتایا کہ حادثے میں بچ جانے والے زیادہ تر افراد کا تعلق افریقہ سے تھا تاہم اس سلسلے میں مزید تفصیلات فراہم نہیں کی گئیں، یہ بھی واضح نہیں کہ یہ کشتی کس وقت ڈوبی، فروری میں سردی اور سمندری طوفان کے باعث اٹلی پہنچنے کے خواہشمند 300افراد ڈوب کر ہلاک ہو گئے تھے۔