غزہ پر بمباری جاری مزید 40 فلسطینی شہید

غزہ (مانیٹرنگ نیوز+ ایجنسیاں) غزہ میں اسرائیلی کارروائی سترہویں دن بھی جاری رہی۔ اسرائیلی حکام کے مطابق پہلی مرتبہ اس کے ریزرو فوجی بھی حصہ لے رہے ہیں جبکہ اسرائیلی حملوں میں شہید فلسطینیوں کی تعداد 900 سے زائد ہوگئی ہے۔ تیسرے مرحلے میں اسرائیل کی فوج غزہ میں آبادی والے علاقوں اور مہاجر کیمپوں میں داخل ہونے کا سوچ رہی ہے جس سے جانی نقصان کا خطرہ بڑھ جائے گا۔ فلسطینی طبی شعبے کے حکام کے مطابق اتوار کو رات گئے غزہ میں اسرائیلی حملوں میں 40 افراد شہید ہوئے جن میں سے 17 غزہ شہر میں شہید ہوئے۔ اسرائیلی لڑاکا طیاروں نے اتوار اور پیر کی درمیانی رات غزہ میں 12 اہداف پر حملے کئے۔ ایک رپورٹ کے مطابق غزہ اور فلسطینی علاقوں پر مزید بمباری کیلئے امریکہ سے اسلحہ کی کھیپ اسرائیل پہنچ گئی ہے۔ امریکہ نے 350 کنٹینر اسرائیل بھیجے ہیں۔ رپورٹ کے مطابق اسرائیل نے اتنی شدید بمباری کی ہے کہ اس کے پاس اسلحہ کی کمی ہوگئی ہے۔ بی بی سی اردو ڈاٹ کام کے مطابق اسرائیل کی فوج نے آہستہ آہستہ غزہ کے گنجان آباد علاقے کی طرف پیش قدمی شروع کردی ہے۔ حماس کی طرف سے پیر کو 9 راکٹ داغے گئے۔ ادھر مصر اور حماس کے درمیان قاہرہ میں سفارتی سطح پر رابطوں میں پیش رفت کی اطلاعات ہیں۔ نجی ٹی وی کے مطابق عینی شاہدین کا کہنا ہے غزہ کے چاروں جانب اسرائیلی فوجوں‘ مزاحمت کاروں کے درمیان فائرنگ کا تبادلہ مسلسل جاری ہے۔ اتوار کی شب اسرائیل کی جانب سے مزید فوجی غزہ بھیجے گئے جس سے ظاہر ہوتا ہے کہ اسرائیل غزہ میں انتہائی بڑی کارروائی کا ارادہ رکھتا ہے۔ آن لائن کے مطابق اقوام متحدہ کی کونسل برائے انسانی حقوق نے غزہ پٹی پر اسرائیلی جارحیت کے خلاف انسانی حقوق کی خلاف ورزی پر مذمتی قرارداد منظور کر لی ہے۔ کونسل کے 33 افریقی‘ ایشیائی‘ عرب ممالک اور کینیڈا نے قرارداد کی حمایت کی جبکہ 13یورپی ممالک نے قرارداد کی مخالفت میں ووٹ ڈالا اور کہاکہ قرارداد میں اسرائیل پر راکٹ حملوں کو نظرانداز کیا گیا ہے۔ حماس کے شام میں جلاوطن رہنما خالد مشعل نے کہا ہے کہ اسرائیل فوجی کارروائی روک دے اور غزہ کا محاصرہ ختم کر دے تو ہی جنگ بندی ہو سکتی ہے۔ انہوں نے کہاکہ ’ہم کوئی عالمی فورس قبول نہیں کریں گے کیونکہ یہ اسرائیلی سلامتی کو تحفظ دینے آئے گی اور مزاحمت میں رکاوٹیں پیدا کرے گی‘ ایسی کوئی بھی عالمی فورس ہم پر تھوپنے کی کوشش ہوئی تو ہم اسے قابض فوج کے طور پر دیکھیں گے۔ آن لائن کے مطابق اسرائیلی فوج نے غزہ میں بارودی سرنگیں بچھا دی ہیں۔ ادھر اسماعیل حانیہ نے خفیہ مقام سے اپنے پیغام میں کہا ہے کہ اسرائیل پر اللہ کی لعنت نازل ہو گی اور فلسطینی اپنے خون سے ’’فتح بین‘‘ کی عبارت تحریر کرینگے۔ انہوں نے کہاکہ غزہ میں نہتے فلسطینیوں کی مزاحمت کسی معجزے سے کم نہیں‘ آخری دم تک اسرائیل کا مقابلہ کرینگے۔ ریڈیو مانیٹرنگ کے سابق برطانوی وزیر خارجہ ڈیوڈ ملی بینڈ نے کہا ہے کہ غزہ میں فوری جنگ بندی ضروری ہے۔نیویارک میں غزہ پر اسرائیلی کارروائی کیخلاف مظاہرہ کے دوران 9افراد کو گرفتار کر لیا گیا جبکہ مظاہرین اور پولیس کے درمیان جھڑپ میں 7پولیس اہلکار زخمی ہو گئے۔ یورپ میں ڈھائی لاکھ سپینی شہریوں نے اسرائیل کے خلاف ایک عظیم الشان احتجاجی مظاہرہ کیا۔