پاکستان سے مذاکرات‘ آئی ایم ایف کا بجلی پر سبسڈی مزید کم کرنے کا مطالبہ: دفاعی بجٹ 9 فیصد بڑھانے کا فیصلہ

پاکستان سے مذاکرات‘ آئی ایم ایف کا بجلی پر سبسڈی مزید کم کرنے کا مطالبہ: دفاعی بجٹ 9 فیصد بڑھانے کا فیصلہ

دبئی (نوائے وقت رپورٹ+ صباح نیوز)  پاکستان اور آئی ایم ایف کے درمیان دبئی میں ٹیکنیکل  مذاکرات مکمل ہو گئے۔  ذرائع  وزارت خزانہ  کے مطابق آئی ایم ایف  سے پالیسی  سطح کے مذاکرات  میں پاکستانی وفد کی قیادت وزیر خزانہ  اسحاق ڈار نے کی۔ گورنر سٹیٹ بنک، سیکرٹری خزانہ اور چیئرمین ایف بی آر بھی  شریک ہوئے۔ آئی ایم ایف نے بجلی پر سبسڈی  مزید کم کرنے پر غور کا کہا،  آئی ایم ایف  نے ایف بی آر  کی کارکردگی  پر مایوسی کا اظہار کیا۔ آئی ایم ایف  نے کہا کہ سٹیٹ بنک کی خودمختاری کا قانون بھی جلد  پارلیمنٹ سے پاس کرایا جائے۔ اجلاس میں ٹیکسوں کے دائرہ کار میں وسعت  سمیت مختلف  ٹیکس انتظامی  اقدامات کا بھی جائزہ لیا۔ آئندہ مالی سال میں  بجٹ اہداف پر بھی بات چیت کی گئی۔ آئندہ مالی سال کا خسارہ 4.1  یا 4.2  فیصد رکھنے پر بھی غور کیا گیا۔ وزیر خزانہ  نے آئی ایم ایف  سے مذاکرات کے بعد آئندہ ہفتہ بجٹ پر اہم اجلاس  بھی طلب کر لیا۔  آئی ایم ایف  سے مذاکرات 10  مئی تک جاری رہیں گے۔دریں اثناء صباح نیوز کے مطابق آئندہ  مالی سال میں دفاعی بجٹ 9فیصد بڑھانے کا فیصلہ کیا گیا ہے میڈیا رپورٹ کے مطابق مالی سال 2015-2016کے لیے دفاعی بجٹ 770ارب روپے تک مختص کرنے کا امکان ہے جبکہ رواں مالی سال کے دوران دفاعی بجٹ 700ارب روپے رکھا گیا تھا نئے مالی سال کے بجٹ پر حکومت نے آئی ایم ایف کو دبئی میں بریفنگ دی آئی ایم ایف کی بریفنگ میں بتایا گیا ہے کہ آئندہ بجٹ میں جی ڈی پی کی شرح کو 6فیصد تک رکھا جائے گا وفاقی ترقیاتی بجٹ کو 580ارب روپے تک رکھے جانے کی تجویز ہے۔