سنکیانگ میں شدت پسندی سے نمٹنے کیلئے چین کے شانہ بشانہ ہیں: نوازشریف

سنکیانگ میں شدت پسندی سے نمٹنے کیلئے چین کے شانہ بشانہ ہیں: نوازشریف

 بیجنگ (آن لائن) وزیراعظم  نواز شریف نے کہا ہے کہ   پاکستان  سنکیانگ  میں شدت پسند ی سے  نمٹنے کیلئے چین  کی کاوشوں میں  اس کے   شانہ بشانہ  کھڑا ہے ،  دونوں ممالک کے سکیورٹی مفادات یکساں ہیں۔ چینی اخبار گلوبل  ٹائمز میں لکھے گئے  ایک  مضمون میں  وزیراعظم  نوازشریف نے کہا ہے کہ  پاکستان اور چین  کے سکیورٹی خدشات ایک دوسرے سے جڑے  ہوئے ہیں پاکستان سنکیانگ  میں مشرقی  ترکستان انڈی پینڈنٹس  موومنٹ سے  چین کو درپیش  سکیورٹی چیلنجز کو سمجھتا ہے اس سلسلے میں چین کے اقدامات کو سراہتا بھی ہے۔ ہم  ان چیلنجز سے نمٹنے کیلئے چین  کے شانہ بشانہ کھڑے ہیں۔ پاکستان چین کے صدر شی جن پنگ  کی جانب سے دہشت گردی سے نمٹنے کیلئے ہماری کوششوں کا احترام کا بھی خیرمقدم کرتا ہے ہم اس بات پر پختہ یقین  رکھتے ہیں افغانستان میں  تعمیرنو اور بحالی کیلئے چین کی دلچسپی  اور حصہ  امن اور ترقی کیلئے ہمارے مشترکہ اہداف ہیں کامیابی کے مواقعے کو فروغ دے گا۔ جنگ زدہ افغانستان میں امن کی بحالی کیلئے چین کا کردار قابل ستائش ہے  چین   کے صدر شی  جن پنگ کے حالیہ دورہ پاکستان کے دروہ چھیالیس  بلین ڈالر  کے معاہدے دونوں ممالک کے درمیان تجارتی  راہداری کی مضبوطی میں اہم کردار ادا کریں گے۔ چین  پاکستان اقتصادی راہداری   معاہدوں کی تکمیل کے پاکستان کی معیشت  پر انقلابی  اثرات مرتب ہوں گے  یہ منصوبہ ملک  کے چاروں صوبوں  کے عوام کی تقدیر بدل کر رکھ دے  گا۔ یہ بات شک وشبہ سے بالاتر ہے کہ  چین  کو بھی ان معاہدوں  سے کئی طرح کے فوائد  حاصل ہونگے عالمی سطح پر اس کے لئے یہ معاہدے  تجارتی   طور پر   اہمیت کے حامل ہیں۔