افغانستان میں امن کیلئے ایران میں طالبان کا دفتر کھولنے پر تیار ہیں: علی اکبر صالحی

کابل (اے پی پی) ایران کے وزیر خارجہ علی اکبر صالحی نے کہا ہے کہ ایران افغانستان میں دیرپا امن کے قیام کی کوششوں کی مکمل حمایت کرتا ہے۔ دارالحکومت کابل میں افغانستان اور ایران کے مشترکہ کمشن کے چوتھے اجلاس کے بعد اپنے افغان ہم منصب ڈاکٹر زلمے رسول کے ہمراہ پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ اگر ایران میں طالبان کے دفتر کھولنے سے امن و امان میں کوئی مدد مل سکتی ہے تو ہم اپنے پڑوسی ملک کے ساتھ اس حوالے سے تعاون پر تیار ہیں۔ انہوں نے کہا کہ افغانستان میں عسکریت پسندانہ کارروائیوں میں ایران ملوث نہیں کیونکہ افغانستان میں بدامنی سے ایران بھی متاثر ہوئے بنا نہیں رہ سکتا۔ دریں اثناءایران اور افغانستان نے باہمی تعاون کے کئی معاہدوں پر دستخط کردیئے ہیں۔ میڈیا رپورٹ کے مطابق دونوں ممالک کے وزارت خارجہ نے کابل میں منعقدہ مشترکہ اقتصادی کمشن کے چوتھے اجلاس کے موقع پر سائنس اینڈ ٹیکنالوجی‘ معاشی شعبہ جات‘ قونصلر سروس‘ ثقافتی تبادلوں اور بارڈر سکیورٹی سمیت باہمی تعاون کے کئی معاہدوں پر دستخط کئے ہیں جبکہ وزیرخارجہ علی اکبر صالحی اور زلمے رسول نے اس عزم کا اظہار کیا ہے۔ دونوں ممالک کے درمیان تعلقات کو آئندہ مزید مضبوط بنیادوں پر استوار کیا جائیگا۔