چین کے 4 نئے ایٹمی میزائلوں کی تنصیب پر بھارت اور امریکہ کو تشویش

نئی دہلی (آن لائن) چین کی جانب سے چار نئے ایٹمی میزائلوں کی تنصیب نے امریکہ اور بھارت کو تشویش میں مبتلا کر دیا۔ بھارتی اخبار ٹائمز آف انڈیا کے مطابق امریکہ کے سائنسدانوں کی فیڈریشن نے کہا ہے کہ امریکہ کو چین کی طرف سے آبدوز پر بلاسٹک میزائل کی تنصیب سے تشویش ہے۔ امریکہ بیجنگ کی کم سے کم دفاعی صلاحیت کے جواز سے متفق نہیں ہے۔ اس نے کافی شکوک و شبہات کو جنم دیا ہے۔ سائنسدان ہانس کرسٹن سیل اور رابرٹ نورس کی رپورٹ کے مطابق چین کے پاس 240 نیوکلیئر وار ہیڈ ہیں۔ لمبے فاصلے تک مار کرنے والے میزائلوں اور وار ہیڈ کی تعداد میں اضافے کا خاص طور پر مقصد امریکہ کو ہدف بنانا ہے۔ رپورٹ میں بھارتی اہلکار کے حوالے سے کہا گیا ہے کہ ڈی ایف 4 کا مقصد بھارت اور روس کو ہدف پر رکھنا ہے۔ بھارتی اہلکار کے مطابق اپ گریڈنگ کا زیادہ تر عمل ڈیلنگا، شنگھائی میں ہو رہا ہے جو کہ دہلی سے 2000 کلومیٹر کے فاصلے پر واقع ہے۔ بھارتی اہلکار کے مطابق ڈیلنگا میں 7200 کلومیٹر تک مار کرنے والے میزائل کی تنصیب کا مقصد غیر واضح ہدف کے طور پر بھارت کے علاوہ نیپال، میانمار اور پاکستان کو بھی نشانے پر رکھنا ہے۔