بھارتی ریاست کیرالا میں نامعلوم افراد نے حضوراکرم صلی اللہ علیہ وسلم کی شان میں گستاخی کرنیوالے لیکچرر پر حملہ کرکے اس کا ہاتھ کاٹ دیا ۔

بھارتی ریاست کیرالا میں نامعلوم افراد نے حضوراکرم صلی اللہ علیہ وسلم کی شان میں گستاخی کرنیوالے لیکچرر پر حملہ کرکے اس کا ہاتھ کاٹ دیا ۔

ٹی جے جوزف نامی یہ شخص مقامی کالج میں پروفیسرتھا اوراس نے تین ماہ قبل امتحان کےلیے بنائے گئے سوالنامے میں حضور اکرم صلی اللہ علیہ وسلم کے بارے میں توہین آمیز جملے شامل کیے تھے ۔ مسلمانوں کے شدید احتجاج پر اسے کالج سے برطرف کردیا گیا تھا جبکہ اس کے خلاف مقدمہ بھی درج ہوا ۔ تاہم ٹی جے جوزف کو تین ماہ گزرنے کے باوجود گرفتار نہیں کیا گیا جس پر مسلمانوں میں اشتعال پایا جاتا تھا۔ بھارتی میڈیا کے مطابق ٹی جے جوزف پر حملہ اس وقت کیا گیا جب وہ صبح اپنی راہبہ بہن اور ماں کے ہمراہ چرچ سے واپس آرہا تھا ۔ اس کی بہن نے میڈیا کو بتایا حملہ آوروں کی تعداد آٹھ تھی جبکہ وہ تلواروں اور خنجروں سے لیس تھے۔ انہوں نے ٹی جے جوزف کا دائیاں ہاتھ مکمل طورپر کاٹ دیا جبکہ اسے بائیں ہاتھ پربھی چوٹیں آئی ہیں ۔ پولیس نے کٹا ہوا ہاتھ اور حملے میں استعمال ہونیوالی وین برآمد کرلی ہے جبکہ دو افراد کو بھی حراست میں لیا گیا ہے۔