امریکی شکایت پر گھٹنے ٹیک دیئے‘ کرزئی نے 88 طالبان

 امریکی شکایت پر گھٹنے ٹیک دیئے‘ کرزئی نے  88 طالبان

 کابل(آن لائن) افغان صدر حامد کرزئی نے   امریکی  شکایت پر  88 طالبان جنگجوئوں  کی رہائی موخر کردی ہے ۔ حکام نے ہفتہ  کے روز  بتایا کہ  یہ فیصلہ  صدر حامد کرزئی  نے امریکہ کی طرف سے  ان شکایات کے بعد  کیا ہے  جن میں کہا گیا ہے کہ  یہ طالبان  رہائی  کے بعد واپس جنگ  کی طرف جاسکتے ہیں ۔ ان طالبان  کی رہائی  پر امریکی فوجی کمانڈرز  اور سینیٹرز  کافی غصہ   میں تھے اور کابل نے اس معاہدے پر  دستخط میں کافی  تاخیر کی ہے  جس کی روح سے 2014ء کے بعد  امریکی فوجیوں کو ا فغانستان  میں رہنے کی اجازت ہوگی ۔ افغان ریویو بورڈ    کے ممبر عبدالشکور   دادرس نے  بتایا کہ صدر  کہ حالیہ حکم کے مطابق  ہم نے  88 قیدیوں کے کیسوں   پر دوبارہ  غور شروع کردیا ہے  افغان صدر نے سکیورٹی    اور انٹیلی جنس  اداروں کو یہ حکم  بھی دیا ہے کہ  وہ ان قیدیوں  کا پس منظر چیک  کریں اور ان کیسوں پر انصاف کو یقینی بنائیں   امریکی جنرل  جوزف ڈنفورڈ   نے رہائی پر سرکاری  اعتراض میں کہا ہے کہ  یہ رہائی بگرام  میں  حوالے کرتے وقت  معاہدے کی خلاف ورزی  ہے  بگرام جیل  مارچ میں امریکی فوج نے افغان حکام کے  حوالے کی تھی  جس کا مطالبہ صدر  حامد کرزئی نے  عوامی  دبائو کے بعد کیا تھا ۔