رابرٹ موگابے ساتویں بار صدرمنتخب کامیابی پر امریکہ اور برطانیہ کے خدشات

رابرٹ موگابے ساتویں بار صدرمنتخب کامیابی پر امریکہ اور برطانیہ کے خدشات

ہوانا (آن لائن) زمبابوے میں تازہ ترین اطلاعات کے مطابق صدر رابرٹ موگابے ساتویں بار ملک کے صدارتی انتخاب جیت گئے ہیں۔ ان انتخابات میں دھاندلی کے کئی الزامات لگائے گئے ہیں۔نتائج کے مطابق 89 سالہ صدر موگابے نے 61فیصد ووٹ لئے جبکہ وزیر اعظم مورگن چنگرائے نے 34 فیصد ووٹ لئے۔ اس سے پہلے وزیر اعظم مورگن چنگرائے کہہ چکے ہیں کہ صدارتی اور پارلیمانی انتخابات میں دھاندلی ہوئی اور وہ قانونی کارروائی کریں گے۔ان کا کہنا تھا کہ حزبِ اختلاف کی جماعت ڈیموکریٹک چینج (ایم ڈی سی) پارٹی اب صدر کی جماعت زانو پی ایف کے لئے کام نہیں کرے گی۔گذشتہ انتخابات میں تشدد کے بڑے واقعات کے بعد 2009ءسے دونوں جماعتیں سیاسی اتحادی رہیں ہیں۔زمبابوے کے الیکشن کمیشن کا کہنا ہے کہ زانو پی ایف جماعت نے دو سو دس نشستوں پر مشتمل پارلیمان میں 137نشستیں حاصل کی ہیں۔ صدارتی نتائج کے اعلان سے پہلے وزیر اعظم چنگرائے نے ایک نیوز کانفرنس میں کہا کہ ’زمبابوے سوگ منا رہا ہے۔دریں اثناامریکہ اور برطانیہ نے زمبابوے کے صدر رابرٹ مگابے کی ساتویں انتخابی جیت پر خدشات کا اظہار کیا ہے۔ امریکی وزیرِخارجہ جان کیری نے کہا ہے کہ نتائج ’لوگوں کے اظہارِرائے کی قابلِ اعتماد نمائندگی‘ نہیں کرتے۔برطانیہ نے بھی اس بات پر ’شدید خدشات‘ کا اظہار کیا ہے کہ رپورٹوں کے مطابق ووٹروں کی بڑی تعداد کو پولنگ سٹیشنوں میں داخل نہیں ہونے دیا گیا۔ برطانوی وزیرِخارجہ ولیم ہیگ نے تمام الزامات کی مکمل چھان بین کا مطالبہ کیا ہے۔