قندھار....صدر کرزئی کے بھائی کی رہائشگاہ کے قریب دھماکہ‘ 23 افراد ہلاک‘ 15 زخمی

قندھار (ثناءنیوز) افغانستان کے صوبہ قندھار میں افغان صدر حامد کرزئی کے بھائی ولی کرزئی کے گھر کے قریب دھماکہ کے نتیجہ میں پولیس اہلکاروں سمیت 23 افراد ہلاک اور متعدد شدید زخمی ہوگئے ۔ ذرائع کے مطابق آئی جی پولیس قندھار عبدالرزاق خان اچکزئی سمیت پولیس کے چار اعلی افسران شدید زخمی ہوگئے جن کو امریکی فورسز نے نیٹو ہیلی کاپٹروں کے ذریعے نیٹو ہسپتال منتقل کر دیا ہے۔ ذرائع کے مطابق آئی جی پولیس کی حالت تشویشناک ہے نجی ٹی وی کے ذرائع کے مطابق آئی جی پولیس کا قافلہ جونہی قندھار شہر میں کینٹ کے علاقہ میں داخل ہوا حامد کرزئی کے بھائی ولی کرزئی اور آئی جی پولیس کے قافلہ کے افراد میں تلخ کلامی ہو گئی جس کے بعد دونوں طرف سے فائرنگ کی گئی اوراسی دوران ایک دھماکہ ہو گیا جس کے نتیجے میں 23 افراد ہلاک اور کئی زخمی ہو گئے ۔ امریکی اور نیٹو فورسز نے موقع پر پہنچ کر علاقہ کا کنٹرول سنبھال لی ہیں ٹی وی کے مطابق واقعے میں 15 فراد زخمی ہوئے۔ دریں اثناءافغان دارالحکومت کابل میں پارلیمنٹ کی عمارت کے نزدیک پولیس چیک پوسٹ پر دھماکہ ہوا۔ نجی ٹی وی کے مطابق دھماکے سے 3 اہلکار زخمی ہو گئے۔ پاک افغان سرحد پر افغان علاقے کے اندر بارودی سرنگ پھٹنے سے 13 باراتی جاں بحق ہو گئے۔ ادھر صوبہ فریاب میں نامعلوم شخص نے سکول کے گیٹ پر دستی بم پھینکا جس سے 17 بچے زخمی ہو گئے۔ حملہ آور پکڑا گیا۔ہرات میں طالبان نے حملہ کر کے نیٹو کے 10 ٹینکر جلا دیئے اور 7 گارڈز کو بھی ہلاک کر دیا۔ جبکہ مغوی صوبائی گورنر قیومزئی کو بیٹے اور 2 محافظوں سمیت رہا کر دیا گیا۔
دھماکہ