آج دنیا بھر میں یوم آزادی صحافت منایا جائے گا

اقوام متحدہ (اے ایف پی) آج دنیا بھر میں یوم آزادی صحافت منایا جائیگا‘ اس موقع پر اقوام متحدہ کے جنرل سیکرٹری بان کی مون نے اپنے ایک بیان میں کہا ہے کہ انہیں پوری دنیا میں صحافیوں کے قتل‘ قید و بند کی صعوبتیں اور دھمکی و ہراساں کرنے پر انتہائی افسوس ہے۔ انہوں نے کہاکہ صحافیوں پر ظلم و تشدد کے واقعات میں دن بدن اضافہ ہوتا چلا جا رہا ہے۔ صحافیوں کے تحفظ کی تنظیم (سی پی جے) کے مطابق 2008ء میں 41صحافی اپنے فرائض کی ادائیگی کے دوران قتل کئے گئے جبکہ 2009ء کے آغاز میں 11صحافیوں کو قتل کر دیا گیا۔ قائم مقام صدر فاروق ایچ نائیک نے آزادی صحافت کے عالمی دن پر پیغام میں کہا کہ آزادی اظہار رائے اقوام متحدہ کے چارٹر برائے انسانی حقوق کے آرٹیکل 19کے تحت بنیادی انسانی حق ہے۔ دستور پاکستان کے آرٹیکل 19میں ہر شہری کو آزادی اظہار کا حق حاصل ہے۔ کسی بھی ملک میں جمہوریت آزاد میڈیا کے بغیر پروان نہیں چڑھ سکتا اس لئے ریاست کا چوتھے ستون کا درجہ دیا گیا ہے۔ موجودہ حکومت آزادی اظہار رائے کا مکمل احترام کرتی ہے۔ انہوں نے مزید کہا کہ آزاد میڈیا کی وجہ سے حکومت کا احتساب ہوتا ہے اور حکومت پر اچھے کام کرنے پر دبائو بھی بڑھاتا ہے۔ ہمیں ملکی سلامتی و ترقی کے لئے اتحاد کا مظاہرہ کرنا ہو گا۔ آن لائن کے مطابق امریکی فریڈم ہائوس کی طرف سے جاری ایک سٹڈی کے مطابق گزشتہ سال70 ممالک میں صحافتی آزاد، 61 ممالک میں جزوی جبکہ64 ممالک میں آزادی صحافت پر مکمل پابندی رہی ۔ 2008ء میں صحافت زوال پذیر رہی۔ فریڈم ہائوس کا کہنا ہے کہ سابق سویت یونین اور مشرق وسطی اور شمالی افریقہ میں صحافت کی آزادی سلب رہی اسرائیل، اٹلی اور ہانگ کانگ میں جزوی آزادی رہی ، بیلاروس ، چین ، کیوبا ، گنی ، اریٹیریا ، ایران ، لیبا، شمالی کوریا ، میانمر ، روانڈا ، ترکمانستان وغیرہ میں صحافتی آزادی مکمل سلب رہی۔اسلام آباد سے خبرنگار خصوصی کے مطابق سپیکر ڈاکٹر فہمیدہ مرزا نے آزادی صحافت کے دن کے حوالے سے اپنے پیغام میں کہا کہ ملک میں موجودہ جمہوری نظام آزادی رائے پرمکمل یقین رکھتا ہے اور اس حوالے سے اس کے راستے میں حائل تمام رکاوٹوں کو دور کردیا جائے گا۔
یوم آزادی صحافت