کینیاحکام کے مطابقگیریسا یونیورسٹی 587طلبہ کو یونیورسٹی سے بازیاب کرایا گیا ہے، جن میں سے 79 زخمی

کینیاحکام کے مطابقگیریسا یونیورسٹی 587طلبہ کو یونیورسٹی سے بازیاب کرایا گیا ہے، جن میں سے 79 زخمی

حکام کے مطابق گیریسا یونیورسٹی کالج کو شدت پسندوں سے خالی کروانے کا آپریشن پندرہ گھنٹے جاری رہا اور چاروں حملہ آوروں کو ہلاک کر دیا گیا ہے۔
5طلبہ کو یونیورسٹی سے بازیاب کرایا گیا ہے، جن میں سے 79 زخمی ہیں۔اطلاعات کے مطابق حملہ آوروں نے خودکش جیکٹیں پہن رکھی تھیں، اور وہ کلاشنکوفوں سے لیس تھے۔وزیرِ داخلہ جوزف اینکیسری نے کہا کہ جب محاصرہ ختم ہوا تو حملہ آوربموں کی طرح پھٹ گئے۔ کئی پولیس اہلکار ان دھماکوں کے نیچے میں زخمی ہوئے۔یہ واضح نہیں ہے کہ آیا حملہ آوروں نے پولیس کو دیکھ کر اپنےآپ کو اڑا دیا یا خودکش جیکٹیں پولیس کی گولیوں کا نشانہ بننے کے بعد خود بخود پھٹ گئیں۔ملک کے بعض حصوں میں رات کا کرفیو نافذ کر دیا گیا ہے۔نو شدید زخمی طلبہ کو ہوائی جہاز کی مدد سے دارالحکومت نیروبی پہنچا دیا گیا ہے۔صومالیہ کی شدت پسند تنظیم الشباب نے حملہ کی ذمہ داری قبول کی ہے۔
اقوامِ متحدہ کے سیکریٹری جنرل بان کی مون نے اس واقعے کو ’دہشت گردانہ حملہ‘ قرار دے کر اس کی مذمت کی ہے اور کہا ہے کہ ان کا ادارہ کینیا کو ’دہشت گردی اور شدت پسندی روکنے‘ میں مدد دینے کے لیے تیار ہے