امریکی کمپنی کے جوتوں پر محترم نام بھارتی ایجنسیوں کی کارروائی ہے: حریت رہنما

سرینگر (اے پی پی) مقبوضہ کشمیر میں حریت رہنماﺅں نے امریکی جوتا ساز کمپنی کے تیار کردہ جوتے پرقابل احترام اسلامی شخصیات کے نام کندہ کرنے کی گستاخانہ حرکت پر شدید ردعمل ظاہر کرتے ہوئے اسے مقبوضہ علاقے میں مسلمانوں کے اتحاد کو پارہ پارہ کرنے کی بھارتی خفیہ ایجنسیوں کی روایتی کارروائی قرار دیا ہے۔ کشمیر میڈیا سروس کے مطابق کل جماعتی حریت کانفرنس کے چیئرمین میر واعظ عمر فاروق نے ایک بیان میں کہا اس طرح کے قبیح فعل پر عوامی غم و غصہ ناگزیر اور جائز تھا۔ عوام صبر و تحمل سے کام لیں اور دشمن کے مذموم عزائم کو خاک میں ملانے کیلئے اپنی صفوں میں اتحاد کو مزید فروغ دیں۔ بزرگ کشمیری حریت رہنما سید علی گیلانی نے بیان میں کہا بھارتی حکومت مقبوضہ علاقے پر اپنے غیر قانونی تسلط کو طول دینے کیلئے اپنی ایجنسیوں کے ذریعے ان گستاخانہ کارروائیوں میں ملوث ہے۔ فرقہ وارانہ فسادات شروع کروانا بھارتی ایجنسیوں کی ایک دانستہ سازش کا حصہ ہے تاکہ کشمیریوں کو رنگ، نسل، دین اور علاقوں کے نام پر تقسیم کیا جا سکے۔ سید علی گیلان نے کشمیریوں سے اپیل کی کہ وہ باہمی اتحاد و اتفاق کے مشعل کو ہر قیمت پر روشن رکھ کر شرپسندوں کے مذموم ارادوں کو خاک میں ملا دیں۔ جموں و کشمیر لبریشن فرنٹ کے چیئرمین محمد یاسین ملک نے کہا کہ بھارتی خفیہ ایجنسیاں کشمیریوں کو فرقوں میں تقسیم کرنے کے درپے ہیں۔ انہوں نے کہا گستاخانہ حرکت کی مذمت اور اس کے خلاف احتجاج ہر مسلمان کا حق ہے۔ کل جماعتی حریت کانفرنس کے رہنماﺅں شبیر احمد شاہ، نعیم احمد خان، مولانا مسرور عباس انصاری، مختار احمد وازہ اور یاسمین راجہ نے اپنے الگ الگ بیانات میں امریکی جوتا ساز کمپنی کی طرف سے جلیل القدر صحابی کی شان میں گستاخی کی شدید مذمت کی ہے۔ جموں کشمیر پیپلز فریڈم لیگ کے چیئرمین محمد فاروق رحمانی نے اسلام آباد میں جاری ہونے والے ایک بیان میں اس گستاخانہ حرکت کی شدید مذمت کی ہے۔ انہوں نے کہا کہ مسلمانوں کیلئے آنحضرت اور آپ کے صحابہؓ کی شان میں گستاخی ناقابل برداشت ہے بلکہ وہ ان کی حرمت اور حفاظت کیلئے اپنی جان بھی قربان کر سکتے ہیں۔