”کمائی دوبارہ شروع ہو گئی“ نیٹو سپلائی کی بحالی پر افغان طالبان مسرور

 قندھار(آن لائن) افغانستان میں طالبان کمانڈرز نے پاکستان کی جانب سے افغانستان کےلئے نیٹو قافلوں کی بحالی پر خوشی کا اظہار کیا ہے۔ طالبان کمانڈر جو مشرقی صوبہ غزنی میں تقریباً ساٹھ شدت پسندوں کی قیادت کرتے ہیں‘ نے امریکی خبررساں ادارے سے انٹرویو میں کہا کہ نیٹوسپلائی کی بندش سے ہمیں حقیقی مالی مشکلات کا سامنا کرنا پڑا۔ ہماری کمائی میں بری طرح سے کمی واقع ہوئی لہٰذا ہماری مزاحمت اتنی مضبوط نہیں تھی جتنی ہم نے منصوبہ بندی کررکھی تھی۔ کمانڈر کا کہنا تھا کہ نیٹوسپلائی کی بحالی کے بعد انہیں امید ہے کہ ان کا خسارہ پورا ہوجائیگا۔ ان کا کہنا تھا کہ ےہ ٹرک جن علاقوں سے گزرتے ہیں‘ وہاں ہم ان سے زبردستی پیسہ لیتے ہیں‘ اگر وہ پیسہ نہیں دےتے تو وہ کبھی منزل تک نہیں پہنچتے یا انہیں شدید حملوں کا سامنا کرنا پڑتا ہے۔ ان کا کہنا تھا کہ ہم نے سات ماہ تک سپلائی لائنز کی بحالی کا انتظار کیا تاکہ ہماری آمدن دوبارہ شروع ہو اور اب کام معمول کے مطابق جارہا ہے۔ ادھر افغان و اتحادی فورسز کا مشترکہ کارروائیوں میں حقانی نیٹ ورک کے رہنما عبداللہ عرف طوفان اور طالبان کمانڈر سمیت کم از کم 7 جنگجوﺅں کو شہید، متعدد کو گرفتار کرنے کا دعویٰ کیا گیا ہے۔ بارودی سرنگ کے ایک دھماکے میں ایک افغان شہری ہلاک، چار زخمی ہو گئے۔