نشہ آور شربت پینے سے ہلاک ہونے والوں کی تعداد 17 ہو گئی‘ تحقیقات کے لئے کمیٹی قائم

لاہور (نامہ نگار + نیوز رپورٹر+ انپے نمائندے سے ) شاہدرہ ٹاﺅن میں کھانسی کانشہ آور،زہرےلا شربت پےنے سے ہلاک ہونے والوں کی تعداد17 ہوگئی ہے۔ پولیس نے ڈسٹرکٹ ہیلتھ آفیسر ڈاکٹر عاصم کی مدعیت میں مقدمہ درج کرکے 3 میڈیکل سٹوروں کے مالکان کو گرفتار کرلیا ہے۔ تفصےلات کے مطابق شاہدرہ ٹاﺅن کے مختلف علاقوں کے رہائشی شہباز، سکندر، پرویز، رمضان، اسلم، وقاص، شہزاد، عبدالحفیظ، جاوےداقبال، رفاقت علی، بابر حسےن،محمد حفےظ،عبدالغفاربٹ، ماجد،راجہ شہزاد اور عاصم وغیرہ کھانسی کا شربت بطور نشہ استعمال کرتے تھے۔ ہفتے کے روز مقامی مےڈےکل سٹورز سے نشے کے لئے ”ٹائنو۔Tyno“ نامی کھانسی کا شربت لے کر پیا جس کے پیتے ہی ان کی حالت خراب ہوگئی۔ ہفتے کے روز گیارہ جبکہ اتوار اور پیر کو باقی افراد نے دم توڑا۔ ڈسٹرکٹ ہیلتھ آفیسر ڈاکٹر عاصم نے بتایا کہ 5 افراد جو زہریلا شربت پینے سے گھروں میں ہلاک ہوئے۔ ان کے کے اہل خانہ نے پولیس کو بتائے بغیر ہی انہےں دفن کر دیاتھا۔ پوسٹ مارٹم کے بعد حقائق سامنے آئیں گے کہ شربت زیادہ مقدار میں پینے سے اموات ہوئیں یا شربت مےں نشہ زیادہ ملادےا گیا تھا۔ ایس پی انوسٹی گیشن عمر سعید نے بتایا کہ تین سٹور مالکان کو گرفتار کرلیا گیا ہے جبکہ کچھ روپوش ہیں۔ ابتدائی تفتیش میں یہ بھی معلوم ہوا ہے کہ زیادہ تر لڑکے اس شربت کو نشہ کے طور پر استعمال کرتے تھے۔ پولےس نے ضرورری کارروائی کے بعد 10 نعشےں ورثاءکے حوالے کر دی ہےں۔ علاوہ ازےں وزیراعلیٰ شہبازشریف کے رپورٹ طلب کرنے پر اتوار کو چھٹی والے دن لیبارٹری کھلوا کر ”ٹائنو“ شربت کے سیمپل بھجوا دئیے گئے ہےں۔ محکمہ صحت نے صوبہ بھر میں کھانسی کے شربت TYNO کی فروخت پرپابندی عائد کردی ہے۔ وزیراعلی نے ہلاکتوں کی تحقیقات کیلئے 3 رکنی تحقیقاتی کمیٹی قائم کردی ہے۔