سی این جی مالکان کے لاہور، اسلام آباد میں مظاہرے، حکومت کو کل تک کا الٹی میٹم

لاہور + اسلام آباد (نیوز رپورٹر + خبرنگار) گیس کی بندش کیخلاف سی این جی مالکان نے لاہور اور اسلام آباد میں مظاہرے کئے اور سڑکیں بلاک کردیں جبکہ سی این جی ایسوسی ایشن نے گیس کی بحالی کیلئے حکومت کو کل تک کا الٹی میٹم دیدیا۔ این این آئی کے مطابق گلبرگ میں سی این جی ایسوسی ایشن کے رہنماﺅں نے مظاہرہ کیا، مظاہرین کی قیادت غیاث پراچہ، کیپٹن (ر) شجاع اور عرفان غوری نے کی اور حکومت کیخلاف نعرے بازی کی۔ نیوز رپورٹرکے مطابق سی این جی ایسوسی ایشن نے احتجاج کا سلسلہ شروع کرتے ہوئے حکومت کو گیس کی بحالی کے لئے کل جمعرات تک کا الٹی میٹم دے دیا ۔ احتجاج کے پہلے مرحلہ میں گزشتہ روز صوبائی دارالحکومت سمیت دیگر شہروں میں پریس کانفرنس کی گئیں ۔ گزشتہ روز کی گئی پریس کانفرنسوں میں الٹی میٹم کے بعد ملک گیر بھر پور مظاہروں کا سلسلہ شروع کرنے کا اعلان کیا گیا ۔ صوبائی دارالحکومت میں گزشتہ روز سی این جی ایسوسی ایشن پنجاب کے صدر راجہ شجاع انور نے گلبرگ میں مشترکہ پریس کانفرنس کی ۔ اس موقع پر ماجد انصاری، عرفان غوری، سمیع الدین ، شیخ فیضان اور ایسوسی ایشن کے دیگر رہنما بھی تھے۔ راجہ شجاع انور نے اس موقع پر کہا کہ سی این جی سیکٹر کی بدنیتی کی بنیاد پر مسلسل گیس بندش کے خلاف بھر پور مظاہروں کا فیصلہ کر لیا ہے اگر حکومت کل تک سی این جی سیکٹر کی گیس بحال نہیں کرتی تو کل سے احتجاجی تحریک شروع کر دی جائے گی ۔ اس سلسلے میں پہلا مظاہرہ بھی کل ٹھوکر نیاز بیگ پر ہوگا۔ انہوں نے کہا کہ حکومت کپٹیو پاور ( ٹیکسٹائل و انڈسٹری) کو بجلی بنانے کے لیے گیس کی فراہمی بند کرے کیونکہ یہ خود بجلی بنا کر 18روپے یونٹ کے حساب سے لیسکو کو بجلی فروخت کر رہے ہیں اور خود لیسکو سے بھی بجلی حاصل کر رہے ہیں۔ کپٹیو پاور کو 110ملین کیوبک فٹ یومیہ گیس کی فراہمی بند کرکے سی این جی سیکٹر کو دی جائے تاکہ عوام کو سستا فیول مل سکے۔ حکومت کرپٹ اور نااہل مشیر پٹرولیم و گیس ڈاکٹر عاصم کو فوری طور پر برطرف کر ے ۔ عوام کو گیس سے محروم کرکے مہنگی ایل پی جی فروخت کرنے کا منصوبہ بنایا گیا ہے۔ جبکہ اسلام آباد میں آل پاکستان سی اےن جی اےسوسی اےشن نے وزارت پٹرولےم اور اوگرا کے خلاف احتجاجی مظاہرہ کےا اور رےلی نکالی۔رےلی کا آغاز راولپنڈی فےض آباد سے ہوا،مظاہرےں ٹانگوں گدھوں پر سوار ہوکر اسلام آباد ہائی وے سے ہوتے ہوئے شکرپڑےاں چوک پہنچے جبکہ ان مےں پےدل چلنے والے افراد کی بھی کثےر تعداد شامل تھی۔جس سے راولپنڈی سے مری اور اسلام آباد جانے والی ٹرےفک دو گھنٹے تک معطل رہی۔شکرپڑےاں چوک پر مظاہرےن نے ٹائر جلائے اور وزارت پٹرولےم،اوگرا اور وزےر پٹرولےم ڈاکٹر عاصم حسےن کے خلاف شدےد نعرہ بازی کی۔