پشاور: سی ڈی کی دکانوں کے بعد موبائل فون شاپس کو بھی دھمکی آمیز خطوط

پشاور (بی بی سی) پشاور میں سی ڈی کی دکانوں کے بعد اب موبائل فون کی ان دکانوں کو بھی دھمکی آمیز خطوط موصول ہو رہے ہیں جو موبائل فون میں گانے‘ فلمیں یا عریاں مواد ڈال کر دیتے ہیں۔ ایسا ہی ایک خط دو روز پہلے پشاور صدر میں قائم اہم تجارتی مرکز بلور پلازہ اور اس کے قریب ایک اور موبائل فون کی دکانوں پر مشتمل پلازہ میں تقسیم کئے گئے ہیں۔ دکانداروں کا کہنا ہے کہ اس خط میں ان دکانداروں سے کہا گیا ہے کہ وہ اپنا کاروبار فوری طور پر بند کر دیں جو موبائل فون میں گانے‘ فلمیں اور یا عریاں تصاویر اور دیگر مواد ڈال کر دیتے ہیں۔ یہ خط ہاتھ سے لکھا گیا ہے اور خط کے اوپر تحریک طالبان پاکستان تحریر ہے۔ اس خط میں ان دکانداروں کو ایک ہفتے کا وقت دیا گیا ہے کہ یہ کاروبار فوری طور پر بند کریں وگرنہ وہ خود نتائج کے ذمے دار ہوں گے۔ بلور پلازہ کے تاجروں کا کہنا ہے کہ اس پلازا میں چند ہی ایسی دکانیں تھیں جہاں موبائل میں فلمیں یا گانے ڈال کر دیا جاتا تھا‘ تاہم اب انہیں بند کر دیا گیا ہے۔ ان کا کہنا تھا کہ اس پلازا میں عریاں مواد کا کام کوئی نہیں کرتا ہے۔