فکرِ انساں پر تری ہستی سے یہ روشن ہوا

ایڈیٹر  |  فرمان اقبال

فکرِ انساں پر تری ہستی سے یہ روشن ہوا
ہے پرِ مرغِ تخیل کی رسائی تا کُجا
تھا سراپا روح تُو‘ بزمِ سخن پیکر ترا
زیبِ محفلبھی رہا‘ محفل سے پنہاں بھی رہا
(بانگِ درا)