ہے محفلِ وجود کا ساماں طراز تُو

ہے محفلِ وجود کا ساماں طراز تُو
یزدانِ ساکنانِ نشیب و فراز تُو
تیرا کمال ہستیِ ہر جاندار میں
تیری نمود سلسلہ¿ کوہسار میں
بانگِ درا