جل رہا ہوں کَل نہیں پڑتی کسی پہلو مجھے

جل رہا ہوں کَل نہیں پڑتی کسی پہلو مجھے

جل رہا ہوں کَل نہیں پڑتی کسی پہلو مجھے
ہاں ڈبو دے اے محیطِ آبِ گنگا تو مجھے
سرزمیں اپنی قیامت کی نفاق انگیز ہے
وصل کیسا‘ یاں تو اک قُربِ فراق انگیز ہے
(بانگِ درا)