ہر اک ذّرے میں ہے شاید مکیں دل

ایڈیٹر  |  فرمان اقبال

ہر اک ذّرے میں ہے شاید مکیں دل
اسی جلوت میں ہے خلوت نشیں دل
اسیرِ دوش و فردا ہے ولیکن
غلامِ گردش دوراں نہیں دل
(بالِ جبریل)