بھارتی چینل اور فلموں سے ہندو ثقافت پاکستان میں فروغ پا رہی ہے: یوسف خان

لاہور (کلچرل رپورٹر) پاکستان کے سینما گھروں میں بھارتی فلموں کی نمائش پر فلم انڈسٹری کی اہم شخصیات نے سخت احتجاج کیا ہے۔ مووی آرٹس ایسوسی ایشن آف پاکستان کے چیئرمین یوسف خان نے کہا ہے کہ بھارتی ٹی وی چیلنز کے پروگراموں سے پہلے ہی پاکستانی معاشرہ متاثر ہو رہا ہے۔ ہندو رسومات زبان اور اور کلچر کا ذکر کرتے ہیں۔ اگر کسی شخص کا اشتعال ہو جائے تو پوچھتے ہیں کہ اس کی ارتھی کیوں نہیں جلائی گئی۔ انہوں نے کہا کہ پاکستانی معاشرے کو ہندو ثقافت سے بچانے کے لئے نہ صرف سینما گھروں پر بھارتی فلموں کی نمائش روکی جائے بلکہ بھارتی چیلنز پر بھی پابندی عائد کی جائے۔ پاکستان فلم ڈائریکٹرز ایسوسی ایشن کے چیئرمین اسلم ڈار نے کہا ہے کہ بھارتی فلموں کی نمائش سے نہ صرف انڈسٹری کو نقصان ہو رہا ہے بلکہ پاکستانی معاشرہ بھی متاثر ہو رہا ہے۔ ہدایت کار سید نور نے کہا ہے کہ بھارت کی فلمیں بڑے بجٹ کی فلمیں ہیں۔ ہماری فلمیں کم بجٹ کی ہیں اس کے باوجود پاکستان کی کم بجٹ کی اچھی فلمیں بھارت کی بڑے بجٹ کی فلموں کا مقابلہ کر رہی ہیں میری فلم ’’مجاجن‘‘ کی نمائش کو تین سو سے زیادہ ہفتے ہو گئے ہیں۔ ابھی تک لوگ اس فلم کو پسند کر رہے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ اچھی فلمیں بنائی جائیں تو وہ بھارتی فلموں کا مقابلہ کر سکتی ہیں۔