جمشید دستی کی مقبولیت میں اضافہ‘ مدمقابل مشکلات سے دوچار

محمد عبدالسمیع نامہ نگار سے
ضلع مظفر گڑھ کے قومی اسمبلی کے 5 اور صوبائی اسمبلی کے 11 حلقوں کیلئے پاکستان مسلم لیگ ن اور پاکستان پیپلز پارٹی پارلیمنٹیرین نے اپنے اپنے امیدواروں کو ٹکٹیں جاری کر دی ہیں۔ جبکہ پاکستان تحریک انصاف نے اپنے امیدواروں کے نام فائنل کر لینے کے باوجود بھی ابھی تک اپنے ٹکٹ ہولڈروں کے ناموں کا اعلان نہیں کیا۔ قومی اسمبلی کے حلقہ این اے 176 مظفر گڑھ ون سے پاکستان مسلم لیگ ن نے سابق ضلع ناظم الحاج سلطان محمود ہنجرا اور پاکستان پیپلز پارٹی پارلیمنٹیرین نے میاں شبیر علی قریشی کو ٹکٹ جاری کر دیئے ہیں۔ اس حلقہ سے سابق گورنر ملک غلام مصطفےٰ کھر بھی امیدوار ہیں جو کہ مسلم لیگ فنکشنل پنجاب کے صدر بھی ہیں۔ مسلم لیگ ن اور مسلم لیگ فنکشنل کے مابین انتخابی اتحاد کے باعث توقع کی جا رہی تھی کہ مسلم لیگ ن یہ حلقہ مسلم لیگ فنکشنل کے صوبائی صدر ملک غلام مصطفےٰ کھر کیلئے خالی چھوڑ دے گی مگر مسلم لیگ ن نے اس حلقہ سے الحاج سلطان محمود ہنجرا کو ٹکٹ جاری کر دیا ہے جس سے سابق چیئرمین ضلع کونسل میں غلام عباس قریشی کو مایوسی ہوئی ہے اور اب اطلاعات یہ بھی ہیں کہ پاکستان تحریک انصاف نے اس حلقہ سے میاں غلام عباس قریشی کو ٹکٹ کی پیشکش کی ہے۔ اس قومی حلقہ سے سابق چیئرمین ضلع کونسل ملک غلام مجتبیٰ غازی کھر کے بیٹے ملک محبوب غازی کھر بھی پاکستان تحریک انصاف کا ٹکٹ حاصل کرنے کیلئے کوشاں ہیں۔ ملک غلام مصطفےٰ کھر طویل عرصہ کے بعد اس قومی حلقہ سے امیدوار بنے ہیں۔ علاقائی گروپنگ کے تناظر میں دیکھا جائے تو اس حلقہ میں مسلم لیگ ن کے ٹکٹ ہولڈر الحاج سلطان محمود ہنجرا کافی مضبوط امیدوار ہیں جبکہ ملک غلام مصطفےٰ کھر میاں غلام عباس قریشی اور میاں شبیر علی قریشی بھی ہنجرا مخالف ووٹوں کی وجہ سے اپنی اپنی کامیابی کی توقع رکھتے ہیں۔ حلقہ کے اکثریتی ووٹوں کا رجحان مسلم لیگ ن کی طرف ہونے کا فائدہ بھی الحاج ملک سلطان محمود ہنجرا کو حاصل ہوگا۔ قومی اسمبلی کے حلقہ این اے 177 میں مسلم لیگ ن کا ٹکٹ میاں خالد احمد گرمانی اور پی پی پی پی کا ٹکٹ ملک نور ربانی کھر کو ملا ہے جبکہ پاکستان تحریک انصاف کے ٹکٹ کیلئے رانا محبوب اختر اور میاں ذوالفقار علی قریشی کوشاں ہیں جبکہ اس حلقہ میں سابق تحصیل ناظم کوٹ ادو ملک محمد رفیق کھر مسلم لیگ ن کا ٹکٹ حاصل کرنے میں ناکامی کے باوجود بھی الیکشن لڑنے کی تیاری کر رہے ہیں۔ اس حلقہ سے جمشید احمد دستی بھی اپنے آزاد پینل کے ساتھ الیکشن لڑ رہے ہیں۔ عوامی مقبولیت کے لحاظ سے جمشید احمد دستی کو مدمقابل تمام امیدواروں پر برتری حاصل ہے۔ قومی اسمبلی کے حلقہ این اے 178 سے جمشید احمد دستی آزاد حیثیت میں الیکشن لڑ رہے ہیں جبکہ پی پی پی پی نے نوابزادہ افتخار احمد خان اور مسلم لیگ ن نے سردار محمد آباد ڈوگر کو ٹکٹ جاری کر دیئے ہیں۔ اس حلقہ سے پاکستان تحریک انصاف نے نوابزادہ منصور احمد خان کا نام فائنل کیا ہے جو کہ خود اس حلقہ سے الیکشن لڑنے کی بجائے میاں ساجد نعیم قریشی کے حق میں دستبردار ہو کر خود پی پی 256 سے الیکشن لڑنے کا فیصلہ کر چکے ہیں۔ اس حلقہ میں جمشید احمد دستی‘ نوبزادہ افتخا احمد خان‘ سردار محمد آباد ڈوگر اور میاں ساجد نعیم قریشی کے مابین کانٹے دار مقابلہ کی توقع کی جا رہی ہے۔ قومی اسمبلی کے حلقہ این اے 179 میں پاکستان پیپلز پارٹی کے سردار معظم علی جتوئی‘ مسلم لیگ ن کے سید باسط احمد سلطان بخاری اور پاکستان تحریک انصاف کے مخدوم سید جمیل احمد حسین بخاری کے مابین سخت مقابلہ متوقع ہے۔ این اے 180 میں آزاد امیدوار سردار عاشق خان گوپانگ‘ مسلم لیگ ن کے مخدوم سید محمد عبداﷲ شاہ بخاری اور پی پی پی کے سردار عبدالقیوم خان جتوئی کے مامین کانٹے دار مقابلہ ہوگا۔
ضلع مظفر گڑھ کے 11 صوبائی حلقوں میں سے پی پی 251 میں مسلم لیگ ن کے ٹکٹ ہولڈ ملک احمد یار ہنجرا‘ پی پی پی کے بیرسٹر یوسف ہنجرا‘ پاکستان تحریک انصاف کے محمد اشرف رند‘ ملک طاہر میلادی کھر‘ محمد ارشد صدیقی‘ مولانا طیب فاروقی اور میاں امجد عباس قریشی کے مابین مقابلہ ہے۔ اس حلقہ سے مجموعی طور پر 35 امیدوار مدمقابل ہیں۔ پی پی 252 میں بھی 34 امیدواروں نے کاغذات نامزدگی جمع کرائے تھے جن میں سے میاں طارق احمد گرمانی مسلم لیگ ن اور انجینئر بلال کھر کو پی پی پی کے ٹکٹ مل چکے ہیں۔ اس حلقہ کے دوسرے اہم امیدواروں میں نیاز حسین گشکوری‘ میاں عامر سلطان گوراہا‘ ملک قادر محمود سنانواں‘ ملک مدثر کھر‘ میاں شاہد مصطفیٰ قریشی‘ میاں ذیشان احمد گرمانی‘ ملک جواد کامران کھر‘ میاں محمد سیف الدین گرمانی اور ڈاکٹر ساجد محمود اشرف شامل ہیں۔ پی پی 253 سے مسلم لیگ ن کا ٹکٹ ڈاکٹر یونس اقبال اور پی پی پی کا ٹکٹ چودھری احسان الحق نولاٹیہ کو مل گیا ہے۔ اس حلقہ کے 35 امیدواروں میں سے دیگر اہم امیدواران غلام مرتضیٰ رحیم کھر‘ عبدالمجید‘ ڈاکٹر سلمان پتل‘ ملک ضیاءالحق ٹونہ‘ میاں صادق محمد‘ سید محمد شہباز غوث اور سردار عبدالحق خان بھی اپنا اپنا ووٹ بنک رکھنے والے امیدواران ہیں۔ پی پی 254 سے 42 امیدواران کے مابین مقابلہ ہے۔ ان میں سے حماد نواز خان ٹیپو کو مسلم لیگ ن اور مہر ارشاد احمد خان سیال کو پی پی پی پی کے ٹکٹ مل گئے ہیں۔ دیگر اہم امیدواروں میں مظفر گڑھ پریس کلب کے صدر اے بی مجاہد‘ سید احسن بخاری‘ مہر عبدالمحسن ترگڑ‘ تہمینہ دستی‘ مشتاق احمد کھیڑا‘ رانا عمردراز فاروقی‘ جام محمد یونس‘ ملک پرویز تھہیم‘ محمد حسین منا شیخ‘ ناصر عباس ترگڑ‘ سردار عبدالحئی دستی اور اے این پی کے محمد طارق‘ آل پاکستان مسلم لیگ کے ملک محمد شعیب اور ایم کیو ایم کے فضل الرحمٰن اور سید محمد معین الدین شامل ہیں۔ پی پی 255 سے مسلم لیگ ن نے ملک حاجی محمد فاروق کھر اور پی پی پی پی نے حاجی سردار نوازش علی خان قندرانی کو ٹکٹ جاری کر دیئے ہیں۔ اس حلقہ سے کاغذات نامزدگی جمع کرانے والے 26 امیدواروں میں سے ارشد قندرانی‘ ملک عبدالرحمٰن کھر‘ منیر احمد خان چانڈیہ‘ ڈاکٹر سہیل عالم‘ محمد اقبال پتافی‘ عبدالمعبود آزاد اور میاں علمدار عباس قریشی بھی اپنا اپنا ووٹ بنک رکھنے والے امیدوار ہیں۔ پی پی 256 سے نوابزادہ منصور احمد خان کو پاکستان تحریک انصاف‘ میاں محمد عمران قریشی کو مسلم لیگ ن اور میاں سجاد حسین قریشی کو پی پی پی پی کے ٹکٹ مل گئے ہیں۔ اس حلقہ سے کاغذات نامزدگی جمع کرانے والے 26 امیدواروں میں سے رانا امجد علی‘ شکیل احمد بھٹہ‘ شیخ نوازش حسین‘ محمد عباس رضا‘ چودھری محمد عامر کرامت بھی مضبوط امیدواران ہیں۔ پی پی 257 سے مسلم لیگ ن نے ملک احمد کریم قسور لنگڑیال‘ پی پی پی پی نے میاں خالد مکول کو ٹکٹ جاری کر دیئے ہیں۔ اس حلقہ کے 36 امیدواروں میں سے ملک محمد سعید کھاکھی‘ سید جمیل احمد شاہ‘ مولانا محمد عمر فاروق شاہ‘ یاسر عطاءقریشی‘ جام مظہر حسین ڈیوالہ‘ مہر غلام نبی ارشد‘ انجینئر احمد حنیف ،نوابزادہ محمد احمد خان بابر‘ میاں محمد عمران‘ جمشید دستی کے بھائی ممتاز احمد بڈی دستی بھی اس حلقہ کے اہم امیدواروں میں شامل ہیں۔ پی پی 258 سے پاکستان پیپلز پارٹی نے ملک عبدالعزیز کھلنگ‘ پاکستان مسلم لیگ ن نے سید ہارون احمد بخاری اور پاکستان تحریک انصاف نے بیرسٹر سید رحم علی شاہ کو اپنے ٹکٹ جاری کر دیئے ہیں۔ اس حلقہ کے 22 امیدواروں میں سے سید عابد حسین بخاری‘ مولانا یحییٰ عباس اور مولانا محمد یوسف سعیدی بھی اپنا بنک ووٹ رکھنے والے اہم امیدوار ہیں۔ پی پی 259 سے سردار خان محمد خان جتوئی کو مسلم لیگ ن اور سردار سمیع اﷲ خان لغاری کو پی پی پی پی کے ٹکٹ مل گئے ہیں۔ اس حلقہ کے 20 امیدواروں میں سے سردار محمد جعفر لغاری‘ میاں خدا بخش‘ سردار لیاقت علی لغاری اور مولانا محمد یحییٰ عباس بھی اہم امیدواران ہیں۔ صوبائی حلقہ پی پی 260 سے سردار شہزاد رسول جتوئی کو پی پی پی پی اور چودھری غلام حسین ارشد کو مسلم لیگ ن کا ٹکٹ مل گیا ہے۔ اس حلقہ کے 22 امیدواروں میں سے سید محمد سبطین رضا‘ ملک محمد عامر‘ ملک محمد علی گھلو اور ذوالفقار علی ملک بھی اہم امیدوار ہیں۔ پی پی 261 میں مسلم لیگ ن کے امیدوار سید قائم علی شمسی‘ پی پی پی کے امیدوار سردار رسول بخش جتوئی اور مسلم لیگ ق کے ٹکٹ ہولڈر سردار عامر طلال گوپانگ کے مابین سخت مقابلہ ہو رہا ہے۔
رائے عامہ کے جائزوں کے مطابق اس وقت ضلع مظفر گڑھ کے قومی حلقوں میں سے این اے 177 اور این اے 178 میں جمشید احمد خان دستی کی سزا کالعدم ہو جانے کے بعد دونوں حلقوں میں جمشید احمد دستی کی مقبولیت میں بے پناہ اضافہ ہو گیا ہے اور دونوں حلقوں میں ان کے مدمقابل امیدواروں کو سخت مشکلات کا سامنا ہے۔