شہباز کی تیسری بار پنجاب میں پرواز

شہباز کی تیسری بار پنجاب میں پرواز

مسلم لیگ ن کی پارلیمانی کمیٹی نے شہباز شریف کو وزیر اعلیٰ پنجاب کیلئے نامزد کیا ہے۔ وہ تیسری بار اس عہدے کا حلف اٹھائیں گے۔ قبل ازیں وہ 1997ءسے 1999ءاور 2008ءسے 2013 ءتک وزیر اعلیٰ رہے۔
وزیر اعلیٰ کے طور پر شہباز شریف کی نامزدگی اصولی اور میرٹ پر فیصلہ ہے‘ انکی گزشتہ پانچ سال کی کارکردگی مسلم لیگ ن کی کامیابی کے اسباب میں سے ایک اور سب سے اہم بھی ہے۔ شہباز شریف جیسے بہترین منتظم کو جس بھی عہدے پر فائز کیا جائے‘ انکی انتھک محنت اور لگن یقیناً انہیں وہاں کامیاب کر سکتی ہے۔ ان کو وزیر اعلیٰ بنانے کا فیصلہ انکی پارٹی کی طرف سے کیا گیا اور انکی پارٹی کے اندر سے کوئی مخالفت نہیں ہوئی۔ گزشتہ دور میں چونکہ شہباز شریف نے صوبے میں کافی ترقیاتی کام کرائے اور کئی ابھی زیر تکمیل ہیں۔ مزید ترقیاتی کاموں اور زیر تکمیل منصوبوں کو پائے تکمیل تک پہنچانے کیلئے ہی غالباً پارٹی نے انکو یہ ذمہ داری سونپنے کا فیصلہ کیا۔ گزشتہ دور میں مرکز کی مخالفت کے باوجود شہباز شریف صوبے میں فعال رہے اب تو مرکز میں بھی انکی پارٹی کی حکومت ہو گی اس لئے یہی توقع رکھی جا سکتی ہے کہ مرکزی اور پنجاب کی حکومتیں ملکی خوشحالی اور قومی ترقی کیلئے ایک دوسرے کی ممدومعاون ثابت ہوں گی۔میاں شہباز سب سے پہلے پنجاب کے شہروں میں خصوصاً 18 سے 20 گھنٹے کی لوڈشیڈنگ میں کمی کروائیں تاکہ 50 ڈگری تک کی تپتی گرمی میں جو تھوڑا بہت سکون مل سکے‘ وہ مل پائے۔