ای او بی آئی کے پنشنرز کی کسمپرسی

 ایمپلائز اولڈ ایج بینیفٹ انسٹی ٹیوشن (ای او بی آئی) سے پنشن حاصل کرنے والے انڈسٹریل اور کمرشل آرگنائزیشن کے ریٹائرڈ ملازمین نے آئندہ مالی سال کے بجٹ میں صرف سرکاری اداروں سے ریٹائرڈ ملازمین کی پنشن میں 10 فیصد اضافہ کرنے اور ای او بی آئی سے پنشن حاصل کرنے والوں کی پنشن میں اضافہ نہ کئے جانے پر شدید احتجاج کیا ہے اور مطالبہ کیا ہے کہ ان کی پنشن میں بھی 10 فیصد اضافہ کیا جائے۔ 18ویںترمیم کے بعد ای او بی آئی کا ادارہ صوبوں کو ملنا تھا لیکن اس وقت کی وفاقی حکومت نے کہا کہ ای او بی آئی کا ادارہ صوبے لے لیں لیکن اس کے فنڈز نہیں دیئے جائیں گےا ان فنڈز کی مالیت کھربوں روپے میں ہے جسے ادارے کے کرتا دھرتاتجارتی مقاصد کے لئے بھی استعمال کرتے اور ان میں گھپلے بھی ہوتے رہتے ہیں۔اس کا ایک چیئر مین کروڑوں روپے اُڑا کر بیرون ملک فرار ہوگیاتھا۔جن کے فنڈز سے یہ ادارہ پھل پھول رہا ہے وہ لوگ کسمپرسی کی زندگی گزارنے پر مجبور ہیں۔فی حال یہ ادارہ مرکز کے پاس ہے اس لئے وہ اس کے پنشنرز کی حالت زار کو بہتر بنانے کوشش کرے۔ان کی کم از کم پنشن دس ہزار مقرر کر کے دیگر سرکاری محکموں کی پنشنرز کی طرز پر ہر سال اضافہ ہوتا رہے تو ان کی زندگی کے آخری ایام قدرے سکون سے گزر سکتے ہیں۔