الیکشن کمیشن اور صوبے بلدیاتی انتخابات کے انعقاد کی حتمی تاریخ دیں

ایڈیٹر  |  اداریہ
 الیکشن کمیشن اور صوبے بلدیاتی  انتخابات کے انعقاد کی حتمی تاریخ دیں

سپریم کورٹ نے بلدیاتی انتخابات کا انعقاد‘ حد بندیوں کے حوالے سے موجودہ لوکل گورنمنٹ ایکٹ پنجاب میں مناسب ترمیم کرنے کے معاملے پر حکومت پنجاب کو ٹائم فریم دینے کیلئے 19 مارچ تک مہلت دے دی ہے‘ عدالت نے سندھ اور پنجاب سے جواب طلب کیا ہے کہ عدالت کو بتایا جائے کہ اگر ان کی مرضی کے قانون کے مطابق فیصلہ کردیا جائے تو وہ کتنے عرصے میں بلدیاتی انتخابات کرادیں گے ۔
گزشتہ سال سپریم کورٹ نے صوبوں کو ستمبر 2013ء میں بلدیاتی الیکشن کرانے کا حکم دیا۔ صوبو ں نے عذر پیش کرکے دسمبر میں انتخابات کرانے کا وعدہ کیا پھر معاملہ فروری مارچ تک بڑھا دیا اور پھر بہانہ سازیوں سے لامحدود مدت تک انتخابات کو ٹالنے کی کوشش کی۔ سپریم کورٹ نے درست ریمارکس دئیے کہ الیکشن کمیشن عام انتخابات کیلئے حد بندی کرسکتا ہے تو بلدیاتی انتخابات کیلئے کیوں نہیں؟ ساتھ ہی یہ ریمارکس بھی دئیے کہ پنجاب اور سندھ حکومت بلدیاتی الیکشن کرانا ہی نہیں چاہتیں۔ قانون سازی اور حد بندیوں کیلئے برسہابرس درکار نہیں ہوتے۔واقعی حکمران اختیارات کی نچلی سطح پر منتقلی میں دلچسپی نہیں رکھتے۔ بلدیاتی الیکشن کو معرضِ التوا میں رکھنے کیلئے صوبائی حکومتیںملبہ الیکشن کمیشن پر اور الیکشن کمیشن حکومتوں پر ڈالتا ہے۔ بلدیاتی انتخابات کا انعقاد آئینی تقاضا ہے جس سے روگردانی کی جارہی ہے بہتر ہے کہ عدلیہ صوبوں کے ساتھ الیکشن کمشن کو بھی طلب کرے اور ان کو قانون سازی کیلئے مناسب وقت دیکر ان سے بلدیاتی الیکشن کی حتمی تاریخ کا اعلان کرادے۔