وزیراعظم کے ایران دورے سے قبل معاہدوں کا ہوم ورک مکمل کیا جائے

ایڈیٹر  |  اداریہ
وزیراعظم کے ایران دورے سے قبل معاہدوں کا ہوم ورک مکمل کیا جائے

ایرانی وزیر داخلہ وزیراعظم میاں نواز شریف کے 11 مئی سے شروع ہونے والے دورۂ ایران کی تیاریوں، سرحدی معاملات اور دو طرفہ سکیورٹی تعلقات پر بات چیت کیلئے گزشتہ روز اسلام آباد پہنچے ہیں۔
پاکستان اور ایران دونوں برادر اسلامی ملک ہیں۔ پاکستان پر جب بھی کوئی مشکل وقت آیا ایران ہمارے ساتھ کھڑا ہوا لیکن گزشتہ کچھ عرصہ سے دونوں ممالک کے تعلقات انتہائی پیچیدہ ہیں۔
 وزیراعظم پاکستان میاں نواز شریف 11 مئی کو ایران کے دورے پر جائیںگے، ابھی دورے میں کافی دن باقی ہیں انہیں چاہئے کہ ان دنوں میں ایران کے ساتھ ہونے والے معاہدوں پر اچھی طرح کام کیا جائے اور تمام اداروں کی مشاورت سے کوئی بھی معاہدہ کریں کیونکہ ایران کے ساتھ پہلے سے گیس پائپ لائن معاہدہ ادھورا پڑا ہے اسے بھی مکمل کرنے کی کوشش کریں اور نئے معاہدے جو بھی ہوں وہ ماضی کی طرح کاغذوں تک محدود نہیں ہونے چاہئیں بلکہ عملی طور پر ان پر عمل بھی نظر آنا چاہئے۔ ایران نے توانائی بحران پر مدد دینے کیلئے انتہائی کم نرخوں پر ایک ہزار میگا واٹ بجلی فراہم کرنے کی پیشکش کی ہے اس پر بھی سنجیدگی سے غور کرنا چاہئے۔ اس کے علاوہ دونوں ممالک کو تعلقات بہتر کرنے کیلئے بھی رکاوٹیں دور کرنی چاہئیں۔ سرحدی معاملات پر کُھل کر بات کی جائے تاکہ آئندہ کوئی ایسا واقعہ پیش نہ آ سکے۔