پوپ فرانسس کی عالمی بے حسی پر روہنگیا مسلمانوں سے معافی

ایڈیٹر  |  اداریہ
پوپ فرانسس کی عالمی بے حسی پر روہنگیا مسلمانوں سے معافی

بنگلہ دیش روہنگیا مہاجرین کی مدد جاری رکھے۔ پوپ نے دنیا کی بے حسی پر معافی مانگ لی۔ آپ کا دکھ ہمارے دلوں میں ہے۔ آواز اٹھاتے رہیں گے۔ ڈھاکہ میں روہنگیا مہاجرین کے وفد سے گفتگو۔
پوپ فرانسس نے گزشتہ روز کاکس بازار میں مہاجر کیمپ میں مقیم روہنگیا مسلمانوں کے ایک وفد سے ڈھاکہ میںملاقات کی۔ اس موقع پر پوپ نے عالمی براری کی بے حسی پر معافی مانگتے ہوئے ان مہاجرین کی حالت پر اظہار افسوس کیا اور ہر فورم پر ان کے لئے آواز بلند کرنے کا عزم دہرایا۔ انہوں نے بنگلہ دیشی حکومت سے بھی کہا ہے کہ وہ ان خستہ اور مظالم کا شکار حال مہاجرین کی مدد جاری رکھے۔ اس سے قبل پوپ نے اپنے دورہ میانمار میں بھی روہنگیا مسلمانوں پر جاری مظالم بند کرنے اور ان کے حقوق بحال کرنے کا مطالبہ کیا تھا۔ مگر میانمار کے ظالم حکمرانوں اس پر کوئی توجہ نہیں دی۔ نہ ہی روہنگیا مسلمانوں پر مظالم بند کرنے اور ان کی آباد کاری کے حوالے سے اپنی ظالمانہ پالیسی بدلنے کا کوئی عندیہ دیا ہے۔ پوپ فرانسس نے روہنگیا مہاجرین کے وفد سے ڈھاکہ میں ملاقات کے دوران ان کے دکھ پر جس کرب کا اظہار کیا ہے۔ عالمی برادری کو اس کا نوٹس لیتے ہوئے میانمار کی حکومت پر اس مسلم کشی پالیسی کے خاتمے کے لئے دبائو ڈالنا چاہئے۔ اس کے ساتھ بنگلہ دیش میں اور میانمار کی سرحد پربے یارومددگا۔ روہنگیا مہاجرین کی مدد کے لئے بھی بڑے پیمانے پر ٹھوس اقدامات کرنا ہوں گے ،تاکہ یہ مہاجرین بھوک اور ناساز گار سرد موسم کی وجہ سے کسی بڑے انسانی المیے کا شکار نہ ہوں۔ دنیا کو چاہئے کہ وہ پوپ کی آواز پر آگے بڑھے اور روہنگیا مسلمانوںکی مدد کرے۔