لیبیا میں محصور پاکستانیوں کو واپس لایا جائے

ایڈیٹر  |  اداریہ
لیبیا میں محصور پاکستانیوں کو  واپس لایا جائے

لیبیابحران شدت اختیار کرنے لگا حریف عسکری گروپوں کے مابین لڑائی تیز تر ہوتی جا رہی ہے متعدد ملکوں نے اپنے شہریوں کو لیبیا سے نکالنا شروع کر دیا ہے جبکہ ہزاروں پاکستانی شہری ابھی لیبیا کے مختلف علاقوں میں وطن واپسی کے منتظر ہیں انصار برنی نے پاکستانیوں کیلئے اپنے ملک کی سرحد کھولنے پر تیونس کے وزیر اعظم سے اظہار تشکر کیا ہے۔
لیبیا کے حالات شدت اختیار کرتے جا رہے ہیں ان حالات میں پاکستانی وزارت خارجہ کو فعال کردار ادا کرکے محصور پاکستانیوں کو وطن واپس لانے کے اقدام کرنے چاہئیں لیکن ہماری وزارت خارجہ خواب خرگوش کے مزے لے رہی ہے جبکہ ہزاروں پاکستانی انہیں مدد کے لیے پکار رہے ہیں۔ انصار برنی ٹرسٹ دنیا بھر میں محصورین کو واپس لانے کیلئے کام کر رہی ہے جو قابل تحسین ہے۔ ایک مثال یونان کی ہے‘ جہاں پاکستانی سفارت کاری کی کامیابی تھی کہ ایک سال میں 700 پاکستانی قیدی باعزت طریقے سے واپس پاکستان لائے گئے لیکن ایک مثال تھائی لینڈ کی بھی ہے جہاں ہزاروں پاکستانی قید ہیں انہیں واپس لایا جائے، بھارت بنگلہ دیش، عراق، شام، یونان اور لیبیا میں بھی پھنسے افراد کی واپسی کے اقدامات کیے جائیں۔ انصار برنی ٹرسٹ اچھا کام کر رہا ہے حکومت کو ان کے ساتھ تعاون کرنا چاہیے تاکہ زرمبادلہ بھیج کر ہماری معیشت کو مستحکم کرنیوالے پاکستانی اپنے آپ کو بے یارو مددگار نہ سمجھیں۔