امن و محبت اور تعلیم کی حامی

صحافی  |  طاہر منیر طاہر

ملالہ یوسف زئی امن و محبت اور تعلیم کی حامی تھی جس نے بہت مشکل حالات میں نہ صرف خود تعلیم کا سفر جاری رکھا بلکہ سوات میں سکول بند ہونے کے باوجود لوگوں کے گھروں میں جا کر تعلیم پر آمادہ کرتی رہی اور تعلیم دیتی رہی۔ علم سے ملالہ کی محبت نے اسے عالمی ایوارڈ کا بھی حقدار ٹھہرایا۔ وہ عورتوں میں تعلیم کی حامی اور خواتین کی فلاح و بہبود کے لئے بہت کچھ کرنے کی حامی تھی لیکن طالبان بلکہ جنہیں ظالمان کہنا زیادہ بہتر ہے انہوں نے فائرنگ کر کے اس امن کی سفیر معصوم طالبہ کو بستر مرگ پر لٹا دیا۔ ملالہ یوسف زئی پر حملہ کی مذمت اور اس کی صحت و سلامتی کے لئے نہ صرف پاکستان بلکہ دنیا کے دیگر ممالک میں بھی تقریبات منعقد ہو رہی ہیں۔ اس سلسلہ کے تحت ایک تقریب پاکستان مسلم لیگ ن متحدہ عرب امارات کے صدر چودھری محمد الطاف کے گھر شارجہ میں منعقد ہوئی جس میں مسلم لیگ ن گلف ریجن کے صدر چودھری نور الحسن تنویر، دوبئی کے صدر عبدالوحید پال، شارجہ کے صدر آزاد علی تبسم، مسلم لیگ ن گلف ریجن کے جنرل سیکرٹری محمد افتخار بٹ، نائب صدر چودھری محمد شفیع، چودھری عبدالغفار، احسان الحق باجوہ، مومن خان درانی، یونس پراچہ، مظہر قیوم اور حلقہ 151 لاہور سے مسلم لیگ ن کے ایم پی اے اعجاز احمد خان نے خصوصی طور پر شرکت کی۔ اس موقع پر متذکرہ قائدین نے کہا کہ ملالہ یوسف زئی نے دہشت گردی کے خلاف بذریعہ قلم جہاد کیا۔ ہم ملالہ پر حملہ کی شدید مذمت کرتے ہوئے اپیل کرتے ہیں کہ ذمہ داران کو جلد از جلد پکڑ کر کیفر کردار تک پہنچایا جائے۔ مسلم لیگ ن متحدہ عرب امارت کے قائدین نے کہا کہ ملالہ یوسف زئی پر حملہ ایک بزدلانہ فعل ہے جس کی پوری دنیا مذمت کر رہی ہے اور ملالہ سے اظہار ہمدردی کر رہی ہے۔ ملالہ ایک طالبہ ہونے کے ساتھ امن و محبت کی سفیر تھی جسے ظالمان نے بستر مرگ پر لٹا دیا ہے۔ ہم ملالہ کی صحت یابی کے لئے دعاگو ہیں اور امید کرتے ہیں کہ ملالہ جلد صحت یاب ہو کر اپنا ادھورا مشن مکمل کرے گی۔ لیگی قائدین نے کہا کہ ملالہ خصوصاً پسماندہ علاقوں میں بچیوں کی تعلیم پر خصوصی توجہ دینے کی حامی تھی اس پر حملہ بزدلانہ اور انسانیت سوز ہے جس کی ہم پُرزور الفاظ میں شدید مذمت کرتے ہیں۔